ہوم » نیوز » وطن نامہ

انٹرکاسٹ شادی کو لے کر ایکسپرٹس کی کیا ہے رائے ، جانئے یہاں

یہ وقت کا مطالبہ ہے کہ ہم اب اس سماجی صورتحال پر سوال اٹھائیں ، جو بین ذات شادی کی مخالفت کرتا ہے ۔ ذات کی بنیاد پر اونچ اور نیچ کا درجہ بنانا اور اس کو ماننا ایک بناوٹی کلچر ہے ، یہ فطری نہیں ہے ۔

  • Share this:
انٹرکاسٹ شادی کو لے کر ایکسپرٹس کی کیا ہے رائے ، جانئے یہاں
انٹرکاسٹ شادی کو لے کر ایکسپرٹس کی کیا ہے رائے ، جانئے یہاں

انٹرکاسٹ شادی کے بارے میں آپ کی کیا رائے ہے ؟


اگر دو لوگ ایک دوسرے سے پیار کرتے ہیں اور شادی کرنا چاہتے ہیں تو ایک آزاد جمہوری سماج کو چاہئے کہ انہیں ایسا کرنے دے ۔ اگر پیار کرنے والے یہ دونوں لوگ الگ الگ ذات کے ہیں اور اگر انہیں لگتا ہے کہ وہ ایک دوسرے کے قابل ہیں اور ایک دوسرے کیلئے ان میں احترام کا جذبہ اور پیار ہے ، تو ان کی شادی پر کسی کو کوئی اعتراض نہیں ہونا چاہئے ۔ ہم سبھی کو اس بات پر متفق ہونا چاہئے کہ ذات کا نظام ہمارے سماج کیلئے بدقسمتی ہے ۔


لاکھوں ہندوستانیوں کو ہر دن ذات کی بنیاد پر اپنے پڑوس سے لے کر اسکولوں اور یونیورسٹیوں میں اس بھید بھاو کا سامنا کرنا پڑتا ہے ۔ یہ سب سے پرانا ناانصافی پر مبنی نظام ہمارے کلچر کے ہر پہلو پر حاوی ہے ۔ پیدائش سے لے کر موت تک ۔ اپنی ہی ذات میں شادی کرکے ذات کے خالص پن کو برقرار رکھا جاتا ہے اور یہ اگلی نسل کو منتقل کیا جاتا ہے ۔ ترقی پسند اور آزاد خیال ہندوستانیوں کو بین ذات شادی سے منہ نہیں موڑنا چاہئے کیونکہ یہ ایک طریقہ ہے جس سے ہم ذات کے نظام کو چیلنج دے سکتے ہیں ، اس لئے بین ذات شادی کا ہم سبھی کو خیر مقدم کرنا چاہئے اور ہمیں ہزاروں سالوں سے چلی آرہی اس ذات پر مبنی ظلم کے نظام سے اوپر اٹھنے کی ضروری کوشش کرنی چاہئے ۔


یہ وقت کا مطالبہ ہے کہ ہم اب اس سماجی صورتحال پر سوال اٹھائیں ، جو بین ذات شادی کی مخالفت کرتا ہے ۔ ذات کی بنیاد پر اونچ اور نیچ کا درجہ بنانا اور اس کو ماننا ایک بناوٹی کلچر ہے ، یہ فطری نہیں ہے ۔ کسی دوسرے کے تئیں محبت کے جذبہ کا ہونا فطری ہے اور اس لئے یہ بہت ہی معمولی بات ہے کہ اگر آپ کو اپنی ذات سے باہر کسی شخص سے محبت ہوجاتی ہے اور اگر آپ دونوں ایک دوسرے سے شادی کرکے اپنا گھر بسانا چاہتے ہیں ، تو آپ کو اتنا جرات مند ہونا چاہئے کہ آپ شادی کے اس فیصلہ کو انجام تک پہنچاسکیں ۔

اگر دو لوگ ایک دوسرے سے پیار کرتے ہیں اور شادی کرنا چاہتے ہیں تو ایک آزاد جمہوری سماج کو چاہئے کہ انہیں ایسا کرنے دے ۔
اگر دو لوگ ایک دوسرے سے پیار کرتے ہیں اور شادی کرنا چاہتے ہیں تو ایک آزاد جمہوری سماج کو چاہئے کہ انہیں ایسا کرنے دے ۔


آپ نے ایک بہت ہی دلچسپ اور ضروری موضوع اٹھایا ہے ۔ ملک بھر میں اس معاملہ پر بحث ہورہی ہے اور اس طرح کے ماحول میں سپریم کورٹ نے آٹھ فروی کو جو تاریخی فیصلہ دیا ، ہمیں اس کا جشن منانا چاہئے ۔ عدالت نے کہا کہ یہ ضروری ہے کہ سماج بین ذات اور بین مذاہب شادیوں کو قبول کرے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Mar 04, 2021 10:54 PM IST