உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جون۔جولائی 2021 کےدوران واٹس ایپ نےلگائی 3ملین سے زائداکاؤنٹس پرپابندی،جانئے تفصیلات

    علامتی تصویر۔(نیوز18)۔

    علامتی تصویر۔(نیوز18)۔

    مذکورہ رپورٹ میں یہ بھی دعویٰ کیا گیا کہ واٹس ایپ کو مذکورہ 46 دن کی مدت کے دوران صارفین سے 594 شکایات کی رپورٹیں موصول ہوئیں، جن میں سے زیادہ تر ان صارفین سے متعلق تھیں جو اپنے اکاؤنٹ پر پابندی کو ختم کرانے کی کوشش کر رہے تھے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
      واٹس ایپ WhatsApp نے 16 جون اور 31 جولائی 2021 کے درمیان ہندوستان میں 3 ملین سے زائد اکاؤنٹس پر پابندی لگا دی۔ کمپنی نے اپنی دوسری اور تازہ ترین شفافیت رپورٹ میں دعویٰ کیا کہ ممنوعہ اکاوئنٹس کو پلیٹ فارم سے ایپ پر خودکار پیغام رسانی کے غیر مجاز استعمال کی وجہ سے ہٹا دیا گیا۔ جس کے نتیجے میں اسپیم spam ہوا۔

      مذکورہ رپورٹ میں یہ بھی دعویٰ کیا گیا کہ واٹس ایپ کو مذکورہ 46 دن کی مدت کے دوران صارفین سے 594 شکایات کی رپورٹیں موصول ہوئیں، جن میں سے زیادہ تر ان صارفین سے متعلق تھیں جو اپنے اکاؤنٹ پر پابندی کو ختم کرانے کی کوشش کر رہے تھے۔

      اس عرصے کے دوران موصول ہونے والی شکایات کی رپورٹوں میں سے واٹس ایپ نے کہا ہے کہ اس نے 74 معاملات میں اصلاحی اقدامات کیے ہیں اور ان میں سے 73 صرف اکاؤنٹ کی پابندی سے منسلک ہیں۔ واٹس ایپ نے کھاتوں پر پابندی لگانے کے بارے میں وضاحتیں شامل کیں، یہ بتاتے ہوئے کہ اس کے پلیٹ فارم پر بدسلوکی کا پتہ لگانا تین مراحل میں ہوتا ہے۔ ایک بار جب کوئی اکاؤنٹ نیا رجسٹرڈ ہوتا ہے، تو بعد میں باقاعدہ پیغام رسانی کے دوران (جہاں واٹس ایپ رویے کا اندازہ لگانے کے لیے ایپ میٹا ڈیٹا استعمال کرتا ہے) اس کا استعمال کیا جاتا ہے۔

      واٹس ایپ کے ترجمان نے اس معاملے پر مزید کہا کہ ہم خاص طور پر روک تھام پر توجہ مرکوز کر رہے ہیں کیونکہ ہمارا ماننا ہے کہ نقصان پہنچنے کے بعد اس کا پتہ لگانے کے بجائے نقصان دہ سرگرمیوں کو پہلے ہونے سے روکنا بہتر ہے۔

      واٹس ایپ بدعنوانی کو روکنے میں ایک انڈسٹری لیڈر ہے، جو آخر سے آخر تک خفیہ کردہ پیغام رسانی کی خدمات ہے۔ کئی سال کے دوران ہم نے مصنوعی ذہانت اور دیگر جدید ٹیکنالوجی ، ڈیٹا سائنسدانوں اور ماہرین اور عمل میں سرمایہ کاری کی ہے تاکہ ہمارے صارفین کو ہمارے پلیٹ فارم پر محفوظ رکھا جا سکے۔

      نئے آئی ٹی رولز 2021 کے بعد یہ دوسری شفافیت کی رپورٹ ہے جسے واٹس ایپ نے ہندوستان میں شائع کیا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: