کیا دہشت گرد شہریوں کو دے رہے ہیں ایڈس کا انجکشن ؟ ۔ دیکھیں کیا ہے وائرل پیام کی حقیقت

ایک فوٹو وائرل کی جارہی ہے جس ایک نوٹس بورڈ دکھایاجارہاہے۔ اس نوٹس بورڈ پرتلگوزبان میں لکھا گیاہے کہ بعض افراد آپ کے گھرآکرآپ کوایڈس کا انجکشن لگائیں گے

Jul 10, 2019 01:26 PM IST | Updated on: Jul 10, 2019 01:33 PM IST
کیا دہشت گرد شہریوں کو دے رہے ہیں ایڈس کا انجکشن ؟ ۔ دیکھیں کیا ہے وائرل پیام کی حقیقت

ان دنوں سوشل میڈیا پرطرح طرح کے پیام وائرل ہورہے ہیں۔ ان پیامات میں ایسے دعویٰ کیے جاتے ہیں سب حیران رہے جاتے ہیں۔ ایساہی ایک پیام ان دنوں سوشل میڈیا پرکافی وائرل ہورہاہے۔ اس وائرل پیام میں ایک فوٹو وائرل کی جارہی ہے جس ایک نوٹس بورڈ دکھایاجارہاہے۔ اس نوٹس بورڈ پرتلگوزبان میں لکھا گیاہے کہ بعض افراد آپ کے گھرآکرآپ کوایڈس کا انجکشن لگائیں گے ۔ دراصل آپ کے گھر آنے والے افراد سرکاری ڈاکٹرس نہیں بلکہ دہشت گرد ہونگے ۔اتنا ہی نہیں اس نوٹس بورڈ کی تصویر میں وجئے واڑہ کے پولیس کمشنرکا نام بھی لکھاگیاہے اور فرضی دستخط بھی ہیں۔

وجئے واڑہ پولیس نے سوشل میڈیا پرایک وائرل پیام کوجھوٹا قراردیاہے۔ اس پیام میں عوام کودہشت گردوں کی جانب سے ایڈس کے انجکشنس سے متعلق انتباہ دیا گیاہے۔ تلگوزبان میں لکھا ہوا یہ پیام فیس بک اور سوشیل میڈیا کے دیگرذرائع پروائرل ہورہاہے۔اس پیام میں عوام سے خواہش کی گئی ہے کہ وہ ان کو کسی بھی اجنبی شخص کی جانب سے انجکشن لگوانے نہ دیں۔

Loading...

اس پیام میں مزید کہا گیا ہے کہ دہشت گرد، سرکاری اسپتالوں کے عہدیداروں کے طورپرعوام کواس بات کی طرف راغب کرنے کی کوشش کریں گے کہ یہ پنی سلین یا وٹامنس کے انجکشنس ہیں تاہم دراصل یہ ایڈس کے وائرس کے انجکشن ہیں۔ یہ نوٹ وجئے واڑہ سٹی پولیس کے نام سے گشت کر رہا ہے تاہم وجئے واڑہ پولیس کمشنر دوارکا تروملا راؤ نے دعوی کیا کہ یہ پیام جھوٹا ہے۔ انہوں نے عوام سے اپیل کی کہ وہ اس پیام کو آگے نہ بھیجیں۔

Loading...