فاروق عبداللہ کی گرفتاری پرشدید ردعمل:دیکھیں اسدالدین اویسی کی پریس کانفرنس کا ویڈیو

حیدرآباد میں ایم آئی ایم صدراسدالدین اویسی نےپریس کانفرنس کی۔انہوں میڈیا سے بات کرتےہوئے مودی حکومت کوسخت تنقید کانشانہ بنایا۔انہوں نےکہاکہ کشمیر حالات اگر معمول پرہوتے تووہاں جانےکے لیے سپریم کورٹ سے اجازت نہیں لینی پڑتی۔

Sep 16, 2019 07:10 PM IST | Updated on: Sep 16, 2019 07:10 PM IST
فاروق عبداللہ کی گرفتاری پرشدید ردعمل:دیکھیں اسدالدین اویسی کی پریس کانفرنس کا ویڈیو

اسد الدین اویسی: فائل فوٹو

حیدرآباد میں ایم آئی ایم صدراسدالدین اویسی نےپریس کانفرنس کی۔انہوں میڈیا سے بات کرتےہوئے مودی حکومت کوسخت تنقید کانشانہ بنایا۔انہوں نےکہاکہ کشمیر حالات اگر معمول پرہوتے تووہاں جانےکے لیے سپریم کورٹ سے اجازت نہیں لینی پڑتی ۔وہیں انہوں نے کہاکہ جموں کشمیر سے دفعہ370 کی منسوخی سےپہلے فاروق عبداللہ کے ساتھ پی ایم مودی میٹنگ کرتے تو بعدمیں ان پرپبلک سیفٹی ایکٹ کیسے لگ سکتاہے۔

Loading...

انہوں نے سوالیہ لہجے میں پوچھا کہ دفعہ 370 کی منسوخی سے قبل وزیراعظم نے فارق عبداللہ سے کیا بات چیت کی تھی۔ لیکن بعد میں انہیں نظربند کردیا۔آل انڈیا مجلس اتحادالمسلمین کے صدر و حیدرآباد کے رکن پارلیمنٹ اسدالدین اویسی نے ریاست جموں و کشمیر کے سابق وزیراعلیٰ فارق عبداللہ کی گرفتاری پر تنقید کی۔

اسدالدین اویسی نے سوال کیا کہ جب فاروق عبداللہ سے ملک کو خطرہ ہے تو وزیراعظم نے ان سے ملاقات کیوں کی؟ پارلیمنٹ میں مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے بھی کہا تھا کہ نہ تو انہیں گرفتار کیا گیا ہے اور نہ ہی ان کو حراست میں رکھا گیا ہے، تو اب بتائیں اس وقت آپ جھوٹ بول رہے تھے؟

اویسی نے کہا کہ مسرت عالم تو علیحدگی پسند لیڈر ہیں لیکن فاروق عبداللہ تو وزیراعلیٰ رہ چکے ہیں پھر فاروق عبداللہ اور مسرت عالم کے ساتھ مرکزی حکومت نے یکساں سلوک کیاہے۔دونوں پر پی ایس اے لگایا گیاہے۔ اسدالدین اویسی کا کہناہے کہ اس سے صاف ظاہرہو رہا ہے کہ مرکزی حکومت طاقت کا بیجااستعمال کر رہی ہے۔اسدالدین اویسی نے کہاکہ ایک سابق وزیراعلیٰ اور80 برس کے ایک بزرگ سے آپ ڈر گئے؟ اس کا مطلب تو یہی ہے کہ کشمیر میں حالات معمول پر نہیں ہیں۔ ناسازگار ہیں۔آپ جو بول رہے ہیں وہ سراسر جھوٹ ہے اور یہ پوری طرح عوام کے سامنے آ چکا ہے۔

Loading...