உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    راج ٹھاکرے کون ہیں؟ اس بات پر مراٹھی اداکار اور لیڈر نے چوکیدار کی پٹائی کردی، مالونی پولیس اسٹیشن میں مقدمہ درج

    راج ٹھاکرے کون ہیں؟ اس بات پر مراٹھی اداکار اور لیڈر نے چوکیدار کی پٹائی کردی

    راج ٹھاکرے کون ہیں؟ اس بات پر مراٹھی اداکار اور لیڈر نے چوکیدار کی پٹائی کردی

    مالونی پولیس نے مراٹھی فلم کے ڈائریکٹر، پروڈیوسر کو ان کے ڈرائیور سمیت گرفتار کرلیا ہے جبکہ پولیس نے مراٹھی فلم کی ہیروئن کو نوٹس بھیجا ہے۔ ہیروئن ایم این ایس ورکر بھی ہے۔ سیکورٹی گارڈ کی پٹائی کے دوران بنایا گیا ویڈیو بھی وائرل ہوا، جس کی بنیاد پر یہ سارا معاملہ مالونی پولیس میں درج کیا گیا۔

    • Share this:
    ممبئی: مالونی پولیس نے مراٹھی فلم کے ڈائریکٹر، پروڈیوسر کو ان کے ڈرائیور سمیت گرفتار کرلیا ہے جبکہ پولیس نے مراٹھی فلم کی ہیروئن کو نوٹس بھیجا ہے۔ ہیروئن ایم این ایس ورکر بھی ہے۔ سیکورٹی گارڈ کی پٹائی کے دوران بنایا گیا ویڈیو بھی وائرل ہوا، جس کی بنیاد پر یہ سارا معاملہ مالونی پولیس میں درج کیا گیا۔ سیکورٹی گارڈ کو مارتے پیٹتے پورا ویڈیو نکال لیا گیا، جس میں خاتون سیکورٹی گارڈ کو پیٹ رہی ہے اور یہ کہتے ہوئے نظر آرہی ہے کہ آپ مہاراشٹر میں رہتے ہیں اور آپ راج ٹھاکرے کو نہیں جانتے؟ یہ سوال پوچھتے ہوئے اسے مسلسل پیٹتے رہے۔ باقی کے اراکین اس پر اپنا غصہ نکال رہے ہیں۔

    پولیس نے آئی پی سی کی دفعات 452،385،323،504،506 اور 34 کے تحت مقدمہ درج کیا اور تینوں ملزمین کو گرفتار کیا اور  خاتون کو نوٹس دے کر چھوڑ دیا ہے۔
    پولیس نے آئی پی سی کی دفعات 452،385،323،504،506 اور 34 کے تحت مقدمہ درج کیا اور تینوں ملزمین کو گرفتار کیا اور خاتون کو نوٹس دے کر چھوڑ دیا ہے۔


    دراصل اس خاتون نے راج ٹھاکرے کی تصویر اس سیکورٹی گارڈ کو دکھائی اور پھر سیکورٹی گارڈ نے صرف یہ پوچھا کہ یہ کون ہے؟ صرف اس حقیقت سے ناراض ہو کر اس سیکورٹی گارڈ کو مارا پیٹا۔ انوراگ دکشت (پولیس سب انسپکٹر، مالونی) نے بتایا کہ گرفتار ملزمین مڈھ میں ایک بنگلے پر جا کر سیکورٹی گارڈ کی پٹائی کی اور پیسے مانگ رہے تھے، یہی نہیں، مار پیٹ کے بعد ان لوگوں نے ویڈیو بھی وائرل کر دیا۔ اس واقعہ کے بعد متاثرہ چوکیدار دیانند سدا نے مالونی پولیس اسٹیشن میں شکایت درج کروائی تھی، جس کے بعد پولیس نے آئی پی سی کی دفعات 452،385،323،504،506 اور 34 کے تحت مقدمہ درج کیا اور تینوں ملزمین کو گرفتار کیا اور  خاتون کو نوٹس دے کر چھوڑ دیا ہے۔
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: