ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

اب بھی ہتھیار ڈالنے کو تیار نہیں ہیں کیپٹن امریندر سنگھ، کہا- میں فوجی ہوں، جنگ کا میدان نہیں چھوڑتا

کیپٹن امریندر سنگھ نے کہا کہ وہ ہار ماننے والے نہیں ہیں۔ انہوں نے اپنی رہائش گاہ پر اپنے حامیوں کو یہ کہہ کر کہ ’میں ایک فوجی ہوں اور میں کبھی جنگ کا میدان نہیں چھوڑتا‘ واضح کردیا کہ وہ ’لڑائی نہیں چھوڑنے‘ والے ہیں۔

  • Share this:
اب بھی ہتھیار ڈالنے کو تیار نہیں ہیں کیپٹن امریندر سنگھ، کہا- میں فوجی ہوں، جنگ کا میدان نہیں چھوڑتا
اب بھی ہتھیار ڈالنے کو تیار نہیں ہیں کیپٹن امریندر سنگھ، کہا- میں فوجی ہوں، جنگ کا میدان نہیں چھوڑتا

نئی دہلی: پنجاب کانگریس میں وزیر اعلیٰ کیپٹن امریندر سنگھ اور نوجوت سنگھ سدھو کے درمیان چل رہی رسہ کشی تھمنے کا نام نہیں لے رہی ہے۔ ایسا لگ رہا تھا کہ ہفتہ کے روز کانگریس اعلیٰ کمان اس موضوع پر کوئی آخری فیصلہ لے گی، لیکن ایسا نہیں ہوا۔ اس درمیان کیپٹن امریندر سنگھ نے کہا کہ وہ ہار ماننے والے نہیں ہیں۔ انہوں نے اپنی رہائش گاہ پر اپنے حامیوں کو یہ کہہ کر کہ ’میں ایک فوجی ہوں اور میں کبھی جنگ کا میدان نہیں چھوڑتا‘ واضح کردیا کہ وہ ’لڑائی نہیں چھوڑنے‘ والے ہیں۔ ہفتہ کی شام کو کیپٹن امریندر سنگھ نے اپنے حریف اور پنجاب کانگریس کے سابق صدر پرتاپ سنگھ باجوا کے ساتھ ہی اسمبلی اسپیکر رانا کے پی سنگھ اور کابینی وزیر رانا گرمیت سنگھ سوڑھی سے اپنی رہائش گاہ پر ملاقات کی۔


نوجوت سندھ سدھو کے پارٹی کے ریاستی سربراہ کے طور پر عہدہ سنبھالنے کی قیاس آرائیوں کے درمیان سابق کرکٹر نے ہفتہ کے روز زیادہ وقت ریاست کے سینئر لیڈروں کے ساتھ گزارا۔
نوجوت سندھ سدھو کے پارٹی کے ریاستی سربراہ کے طور پر عہدہ سنبھالنے کی قیاس آرائیوں کے درمیان سابق کرکٹر نے ہفتہ کے روز زیادہ وقت ریاست کے سینئر لیڈروں کے ساتھ گزارا۔


نوجوت سندھ سدھو کے پارٹی کے ریاستی سربراہ کے طور پر عہدہ سنبھالنے کی قیاس آرائیوں کے درمیان سابق کرکٹر نے ہفتہ کے روز زیادہ وقت ریاست کے سینئر لیڈروں کے ساتھ گزارا اور اسی دوران آل انڈیا کانگریس کمیٹی (اے آئی سی سی) کے جنرل سکرکٹری اور پنجاب کے انچارج ہریش راوت، مشکل سے کچھ کلو میٹر دور ایک ناراض کپتان کو خاموش کرنے کی کوشش میں لگے رہے، جنہوں نے جمعہ کو یہ وارننگ دی تھی کہ اگر نوجوت سنگھ سدھو کو عہدہ دیا گیا تو پارٹی میں تقسیم طے ہے۔ اس درمیان نوجوت سنگھ سدھو کو جو اطلاع دی گئی وہ بہت واضح تھی کہ انہیں سبھی کو ساتھ لے کر چلنا ہوگا اور اس کا مطلب یہ بھی ہوسکتا ہے کہ انہیں کیپٹن امریندر سنگھ سے بھی تال میل بٹھانے کی ضرورت ہوگی۔


کیپٹن امریندر سنگھ نے کہا کہ وہ ہار ماننے والے نہیں ہیں۔
کیپٹن امریندر سنگھ نے کہا کہ وہ ہار ماننے والے نہیں ہیں۔


کانگریس ذرائع نے کہا کہ جس وقت وزیر اعلیٰ کیپٹن امریندر سنگھ نے سنا کہ نوجوت سنگھ سدھو ان سے ملیں گے، انہوں نے چنڈی گڑھ کا دورہ کر رہے ہریش راوت سے کہا کہ وہ بیان دینے کے لئے تیار ہیں کہ ریاستی صدر عہدے کے لئے سونیا گاندھی کے فیصلے کو قبول کیا جائے گا۔ ذرائع نے کہا، ’حالانکہ، کیپٹن نے کہا ہے کہ وہ نوجوت سنگھ سدھو سے تب تک نہیں ملیں گے جب تک کہ سابق کرکٹر اور ان کے حریف اپنے قابل توہین ٹوئٹ اور انٹرویو کے لئے معافی نہیں مانگتے‘۔

ذرائع کے مطابق، انہوں نے مزید کہا، ’میرے اوپر کئے گئے انکشاف اور عوامی بیانات نے پنجاب میں کانگریس پارٹی کو بہت نقصان پہنچائی تھی اور یہ سب سے بدقسمتی والا تھا، جس طرح سے دہلی سے پنجاب کو کنٹرول کیا جا رہا تھا‘۔ کچھ دن پہلے ہی پنجاب کے وزیر اعلیٰ نے بیان جاری کرکے کہا تھا کہ ان کے ریٹائر ہونے کا سوال ہی نہیں ہے۔ دراصل، ان کے سخت رویہ نے کانگریس پارٹی کو بھی یہ واضح کرنے کے لئے مجبور کردیا ہے کہ آئندہ انتخابات ان کی قیادت میں لڑا جائے گا۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Jul 18, 2021 08:40 AM IST