ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

کیرالامیں صرف 3دن کی ویکسین باقی رہ گئی ہے،کیرالا کے وزیراعلی پنارائی وجین نےمرکزی وزیر کو لکھاخط

اسٹاک اگلے تین دن تک ویکسی نیشن پلان کو پورا کرے گا اور اس کے بعد ویکسین کی بچی کچی مقدار بھی ختم ہوجائے گی۔وجیان نے کہا کہ کیرالا میں ویکسین کی کمی کو ریاست کے چیف سکریٹری کے علاوہ صحت کے سکریٹری نے مرکزی وزارت صحت کے نوٹس میں لایا ہے۔

  • Share this:
کیرالامیں صرف 3دن کی ویکسین باقی رہ گئی ہے،کیرالا کے وزیراعلی پنارائی وجین نےمرکزی وزیر کو لکھاخط
پنارائی وجین نے لکھا ہے خط

کیرالہ میں عالمی وبا کورونا وائرس (Covid-19) کے خلاف ویکسین کا ذخیرہ صرف تین دن تک ہی باقی رہے گا اور اس کے بعد وہ ختم ہوجائے گا۔ کیرالہ کے وزیراعلی پنارائی وجین (Pinarayi Vijayan) نے پیر کو مرکزی وزیرصحت ڈاکٹر ہرش وردھن (Dr Harsh Vardhan) کو خط لکھ کر اس بات سے آگاہ کیا ہے۔ انھوں نے ریاست کے لئے ویکسین کے 50 لاکھ مزید خوراک طلب کی ہے۔اپنے خط میں پنارائی وجین نے کہا کہ کیرالہ میں کورونا وائرس کی خوراک کے لئے 45 دن کا ایکشن پلان ہے۔ جس کے لئے روزانہ 2 لاکھ خوراک کی ضرورت ہے۔


انہوں نے لکھا کہ ریاست کو اب تک ویکسین کی 56 لاکھ خوراکیں موصول ہوچکی ہیں اور 11 اپریل تک 48 لاکھ خوراکیں دی جا چکی ہیں۔ جب کہ موجودہ اسٹاک اگلے تین دن تک ویکسی نیشن پلان کو پورا کرے گا اور اس کے بعد ویکسین کی بچی کچی مقدار بھی ختم ہوجائے گی۔وجیان نے کہا کہ کیرالا میں ویکسین کی کمی کو ریاست کے چیف سکریٹری کے علاوہ صحت کے سکریٹری نے مرکزی وزارت صحت کے نوٹس میں لایا ہے۔



انہوں نے لکھا ہے کہ ’خط لکھ کر توجہ دلانے کے باوجود بھی ابھی ہمیں ویکسین کی کوئی اضافی خوراکیں فراہم نہیں کی گئی ہے۔دریں اثنا ہندوستان میں پیر کو گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کووڈ۔19کے 1,68,912 تازہ کیس ریکارڈ کیے گئے ہیں۔ جو سات دنوں میں چھٹویں بار ریکارڈ اضافہ ہوا۔

اس وقت ہندوستان میں دو ویکسین کو کورونا وائرس کے خلاف استعمال کیا جارہا ہے۔ جس میں سے پہلی ویکسین پونے میں واقع سیرم انسٹی ٹیوٹ آف انڈیا (Serum Institute of India) کی کووی شیلڈ (Covishield) ویکسین ہے۔ جو کہ آکسفورڈ۔ آسٹرازینیکا کے تعاون کے ذریعہ تیار کیا گیا اور دوسری ویکسین حیدرآباد میں واقع بھارت بائیوٹیک (Bharat Biotech) کی کو۔ ویکسن (Covaxin) ہے۔ اگر ہندوستان کے ریگولیٹر ڈرگس کنٹرولر جنرل آف انڈیا (regulator Drugs Controller General of India) کے ذریعہ منظوری مل جاتی ہے تو روس میں تیار شدہ ویکسین اسپوتنک وی (Sputnik V) ملک میں استعمال ہونے والی تیسری ویکسین بن جائے گی۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: Apr 13, 2021 11:41 AM IST