چیف جسٹس پرجنسی ہراسانی کا الزام لگانے والی خاتون نے مانگی جانچ رپورٹ کی کاپی

شکایت کنندہ نےکہا کہ کمیٹی کے ذریعہ اس کی رپورٹ کواسےبھی دیا جانا چاہئے تاکہ اسے معلوم ہوسکے کہ کس بنیاد پراس کی شکایت کو خارج کیا گیا ہے۔

May 07, 2019 06:29 PM IST | Updated on: May 07, 2019 06:29 PM IST
چیف جسٹس پرجنسی ہراسانی کا الزام لگانے والی خاتون نے مانگی جانچ رپورٹ کی کاپی

چیف جسٹس رنجن گوگوئی کی ان کی بیوی روپانجلی گوگوئی کے ساتھ: فائل فوٹو

سپریم کورٹ کے چیف جسٹس رنجن گوگوئی کوجنسی ہراسانی معاملے میں کلین چٹ دیئے جانے کے ایک دن بعد شکایت کرنے والی خاتون نے کہا کہ کمیٹی کے ذریعہ اس کی رپورٹ کواسےبھی دیا جانا چاہئے تاکہ اسے معلوم ہوسکے کہ کس بنیاد پراس کی شکایت کو خارج کیا گیا ہے۔

جسٹس ایس اے بوبڑے، جسٹس اندرا بنرجی اوراندو ملہوترا کی بینچ نے چیف جسٹس آف انڈیا کے خلاف عائد الزامات کو خارج کردیا تھا۔ سپریم کورٹ نے کہا کہ رپورٹ جسٹس رنجن گوگوئی اورسینئرجج کودے دیا گیا ہے، لیکن اسے عوامی نہیں کیا جاسکتا کیونکہ یہ ایک غیر رسمی جانچ تھی۔

Loading...

اس سے قبل الزام لگانے والی سپریم کورٹ کی سابقہ خاتون ملازم نےتین ججوں کے ان ہاوس پینل کے ذریعہ کی جارہی جانچ میں شامل ہونےسےانکارکردیا ہے۔ خاتون کا کہنا ہے کہ وہاں سےاسےانصاف ملنےکی کوئی امید نہیں تھی۔ خاتون نے یہ انکارجسٹس ایس اے بوبڑے کی قیادت میں پیرکوپینل کی تیسری ان چیمبرمیٹنگ کے بعد کیا۔ خاتون نے کہا تھا کہ اب تک ہوئی سماعت میں اسے ڈرلگا کیونکہ وہاں اسے اکیلے حاضرہونا تھا۔ اس کے وکیل کو بھی کارروائی کا حصہ نہیں بننےدیا گیا۔ شکایت کنندہ کی واپسی کے بعد عدالت کی کمیٹی نے اپنی جانچ ختم کرنےکا فیصلہ لیا تھا۔ پیرکوسپریم کورٹ کے ان ہاوس پینل نے اپنی رپورٹ سونپ دے دی ہے۔

Loading...