گھوٹالے پر جج کے سوال پر پرجذباتی ہو گئے یدی یورپا، چھلک آئے آنسو

بنگلورو۔ بی جے پی کی کرناٹک یونٹ کے صدر بی ایس یدی یورپا کی آنکھوں میں پیر کو یہاں سی بی آئی عدالت میں اس وقت آنسو آ گئے جب ان سے ان کے وزیر اعلی کے دور میں مبینہ غیر قانونی کان کنی اسکینڈل کے سلسلے میں کئی سوال پوچھے گئے۔

May 03, 2016 12:06 PM IST | Updated on: May 03, 2016 12:07 PM IST
گھوٹالے پر جج کے سوال پر پرجذباتی ہو گئے یدی یورپا، چھلک آئے آنسو

بنگلورو۔ بی جے پی کی کرناٹک یونٹ کے صدر بی ایس یدی یورپا کی آنکھوں میں پیر کو یہاں سی بی آئی عدالت میں اس وقت آنسو آ گئے جب ان سے ان کے وزیر اعلی کے دور میں مبینہ غیر قانونی کان کنی اسکینڈل کے سلسلے میں کئی سوال پوچھے گئے۔ یدی یورپا کو عدالت نے ان کے خاندان کی طرف سے چلائے جا رہے پریڑنا ٹرسٹ کو مبینہ طور پر ملے 20 کروڑ روپے کے چندے کے سلسلے میں طلب کیا تھا۔

ڈھائی گھنٹے تک جاری رہی گواہی کے دوران ان سے 475 سوال پوچھے گئے۔ یدی یورپا کی آنکھوں میں اس وقت آنسو آ گئے جب جج نے ان سے پوچھا کہ کیا انہیں اس معاملے پر کچھ کہنا ہے تو اس پر جذباتی سابق وزیر اعلی نے کہا کہ میں نے کچھ بھی غلط نہیں کیا ہے اور میں نے جو کچھ بھی کیا ہے وہ قانون کے دائرے میں کیا ہے۔ نہ ہی ان کارروائیوں سے سرکاری خزانے کو کوئی نقصان ہوا ہے۔ اس سوال سے پہلے بھی یدی یورپا کا گلا روندھ گیا تھا جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا وہ سیاسی سازش کا شکار ہوئے ہیں۔

Loading...

اس کا جواب دیتے ہوئے یدی یورپا جذباتی ہو گئے اور ان کی آواز بھاری ہو گئی۔ انہیں حال میں ہی کرناٹک میں بی جے پی کا سربراہ بنایا گیا ہے۔ یدی یورپا کی قیادت میں بی جے پی پہلی بار 2008 میں کرناٹک میں اقتدار میں آئی تھی۔ جنوبی ہندستان میں بی جے پی کی یہ پہلی حکومت تھی۔ لوک آیکت سنتوش ہیگڑے کی طرف سے جولائی 2011 میں غیر قانونی کان کنی پر سونپی گئی رپورٹ میں یدی یورپا کو ملزم قرار دئیے جانے کے بعد انہیں وزیر اعلی کے عہدے سے استعفی دینا پڑا تھا۔

رپورٹ میں ساؤتھ ویسٹ مائننگ کمپنی سے پریڑنا ٹرسٹ کو 10 کروڑ روپے ملنے اور کان کنی کمپنی کی طرف سے راچینہلی میں 1.02 ایکڑ زمین خریدنے کے بدلے میں ٹرسٹ کو 20 کروڑ روپے ادا کئے جانے کی بات کہی گئی تھی۔ اس ٹرسٹ کی ملکیت اور انتظام یدی یورپا کے خاندان کے پاس ہے۔

Loading...