مشرقی چمپارن میں پھل پھول رہا ہے شہد کا کاروبار، 1952 میں ہوئی تھی شہد صنعت کی شروعات

مظفرپور: بہارمیں مشرقی چمپارن ضلع کے مہسی بلاک میں بڑے پیمانے پر شہد کی پیداوار ہوتی ہے۔

Dec 02, 2015 08:51 PM IST | Updated on: Dec 02, 2015 08:52 PM IST
مشرقی چمپارن میں پھل پھول رہا ہے شہد کا کاروبار، 1952 میں ہوئی تھی شہد صنعت کی شروعات

مظفرپور: بہارمیں مشرقی چمپارن ضلع کے مہسی بلاک میں بڑے پیمانے پر شہد کی پیداوار ہوتی ہے۔

چمپارن ضلع کے مہسی بلاک میں 1952 میں شہد کی صنعت شروع ہوئی تھی ۔ ابتدا میں چند مسلم نوجوانوں نے اسے شروع کیا اور پھر رفتہ رفتہ علاقے کی آبادی کا ایک بڑاحصہ شہد کی صنعت سے وابستہ ہوگیا۔ فی الوقت مہسی بلاک میں شہد کی صنعت سے وابستہ لوگوں کی آدھی آبادی مسلم ہے۔

ابتدامیں عام طورپرہرجگہ پائی جانے والی چھوٹی مکھیاں پالی جاتی تھیں ، لیکن اب اٹالین نسل کی بڑی مکھیاں بھی پالی جارہی ہیں۔ یہ مکھیاں پہلی مرتبہ پنجاب سے چمپارن لائی گئی تھیں۔

اب تومہسی میں ہی اٹالین نسل کی شہدکی مکھیوں کی نسلی افزائش بھی ہورہی ہے۔ اتنا ہی نہیں یہاں سے شہدکی مکھیاں ملک کی دوسری ریاستوں میں بھی سپلائی کی جارہی ہیں۔اس طرح یہاں شہدکی پیداوارکے متوازی شہد کی مکھیوں کی نسلی افزائش کابھی ایک مستقل کاروبارچل پڑا ہے۔

Loading...

مہسی میں 1972 سے شہد کا کاروبارکررہے حاجی محبوب علی کا کہنا ہے کہ شہد اور شہد کی مکھیوں کی نسلی افزائش،یہ دوایسی مستقل تجارتیں ہیں کہ اگران کی جانب حکومت توجہ دے ، توشہدکی صنعت سے ملک کی گھریلو پیداوار میں گراں قدر اضافہ ہوسکتا ہے۔

شہد کی مکھیاں پالنے والے اور شہد تیار کرنے والے افرادپورے سال ملک کی مختلف ریاستوں  کے دورہ پررہتے ہیں۔لیکن ان کے دورے تنہانہیں بلکہ شہد کی مکھیوں کے ساتھ ہوتے ہیں۔وہ مکھیوں سے بھرے ڈبوں کے ساتھ فصلوں کے اعتبارسےملک کے مختلف مقامات کی سیرکرتے ہیں ، تاکہ مکھیوں کومختلف فصلوں کے پھول اورپھل غذاکے طور پر ملیں اور مختلف ذائقوں کے شہد تیار ہوسکیں۔

مشرقی چمپارن ضلع کے مہسی بلاک سے مشرق کی طرف جانے والی مظفرپور شہر تک کی چالیس کلومیٹرطویل پٹی لیچی کی فصل کے لیے دنیا بھرمیں مشہور ہے اور لیچی کے شہد کا ذائقہ دیگرفصلوں کے شہد کے ذائقوں سے کہیں زیادہ اچھا ہوتا ہے۔

Loading...
Listen to the latest songs, only on JioSaavn.com