ہوم » نیوز » No Category

گلیمرس دنیا کا سیاہ سچ ، جھانسہ دے کر ماڈل کی اجتماعی آبروریزی ، درندگی کی تمام حدیں پار

نئی دہلی : گلیمر دنیا یوں تو کافی چکاچوند بھری ہے، لیکن اسی دنیا میں کچھ ایسے چہرے بھی ہیں جو ذہن کے انتہائی کالے ہیں ۔

  • Pradesh18
  • Last Updated: Apr 11, 2016 10:21 AM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
گلیمرس دنیا کا سیاہ سچ ، جھانسہ دے کر ماڈل کی اجتماعی آبروریزی ، درندگی کی تمام حدیں پار
نئی دہلی : گلیمر دنیا یوں تو کافی چکاچوند بھری ہے، لیکن اسی دنیا میں کچھ ایسے چہرے بھی ہیں جو ذہن کے انتہائی کالے ہیں ۔

نئی دہلی : گلیمر دنیا یوں تو کافی چکاچوند بھری ہے، لیکن اسی دنیا میں کچھ ایسے چہرے بھی ہیں جو ذہن کے انتہائی کالے ہیں ۔  بری نیت والے یہ وہ درندے ہیں جو معصوم لڑکیوں کو فلموں میں کام کا لالچ دے کر ان کے ساتھ حیوانیت کی ساری حدیں پار کر دیتے ہیں ۔ دہلی کی ایک ماڈل ایسی ہی درندگی  کا پونے میں شکار ہوئی ہے۔


دہلی کی ایک ماڈل  جو بالی ووڈ میں اپنی شناخت بنانا چاہتی تھی، لیکن ایک غلط رابطہ نے اس کی زندگی جہنم بنا دی ۔ اس ماڈل کے ساتھ جو کچھ ہوا، وہ انتہائی خوفناک ہے ۔ فلم میں کام دلانے کے جھانسے میں چار لوگوں نے اس کے ساتھ اجتماعی آبروریزی کی ۔  درندوں کی حیوانیت یہی نہیں تھمی ، بلکہ انہوں نے ماڈل کے پورے جسم کو بھی بری طرح سگریٹ سے جلادیا ۔


متاثرہ ماڈل کا کہنا ہے کہ گزشتہ سال دسمبر کے پہلے ہفتے میں ایک خاتون نے اس سے رابطہ کیا تھا ۔ اس خاتون نے اسے فلموں میں کام کا آفر دلانے کی بات کہی ۔ اس کے بعد خاتون کے کہنے پر وہ اسی سال فروری میں پنے گئی ، لیکن متاثررہ ماڈل کا الزام ہے کہ پنے میں جن چار لوگوں سے اس کی ملاقات کرائی گئی ،  اس نے فلم میں کام دلانے کے بدلے میں جسمانی تعلقات بنانے کی شرط رکھی ، جس کی اس نے مخالفت کی ۔


متاثرہ ماڈل کے مطابق مخالفت کرنے پر ملزموں نے ماڈل کے ساتھ پہلے مار پیٹ کی اور پھر اس کو نشہ آور ادویات پلا دی۔  اس کے بعد وہاں موجود لوگوں نے اس کے جسم کو سگریٹ سے داغا اور پھر بیلٹ سے اس کی پيٹاي کی ۔ جسم کا کوئی بھی حصہ زخموں کے نشانات سے نہیں بچا ہے ۔ پرائیویٹ اعضا کو بھی سگریٹ سے داغا گیا ۔



فلمی دنیا میں قدم رکھنے کا خواب دیکھنے والی اس ماڈل نے کبھی نہیں سوچا تھا کہ ایک غلط خاتون کے رابطے میں آنے کی اس کو اتنی بڑی سزا ملے گی ۔  تاہم درندوں کے چنگل میں پھنسی اس ماڈل کی مدد بھی ایک لڑکی نے ہی کی ۔ خاص بات یہ ہے کہ جس لڑکی نے ماڈل کو بچانے میں مدد کی ، وہ خود بھی ان درندوں کے چنگل میں گزشتہ ایک سال سے پھنسی ہوئی تھی ۔ ماڈل کا درد دیکھنے کے بعد اسے بھی ہمت ملی اور وہ ماڈل کے ساتھ 15 مارچ کو پنے سے فرار ہونے میں کامیاب ہو گئی ۔

سماج کے خوف کی وجہ سے پہلے تو یہ ماڈل اور اس کی دوست شکایت کرنے سے بچ رہی تھیں اور گھر پر ہی اپنا علاج کرانے لگیں، لیکن بعد میں دونوں نے ہمت کر دہلی پولس میں شکایت کرنے کا فیصلہ کیا اور 23 مارچ کو کوٹلہ مبارکپور تھانے میں اپنی شکایت لے کر پہنچ گئی ۔ متاثرہ کی شکایت پر پولیس نے نامعلوم افراد کے خلاف دفعہ 323، 328 354 اے ،  354  بی ، 506، 34 کے تحت مقدمہ درج کر لیا ۔  تاہم معاملہ پنے کا تھا ، اس لیے دہلی پولیس نے زیرو ایف آئی آر درج کر کے کیس کو پنے کی پولیس کو ٹرانسفر کر دیا۔

Model_2

جنوبی دہلی کے ڈپٹی کمشنر بھگوان سنگھ کا دعوی ہے کہ اس کیس سے وابستہ تمام میڈیکل رپورٹ پولیس تھانے کو بھیج دی گئی ہے اور وہاں ریپ کا بھی مقدمہ درج ہو گیا ہے ۔  وہیں متاثرہ ماڈل کا الزام ہے کہ جب اس نے پنے پولیس سے پوچھا تو انہوں نے کیس ٹرانسفر ہونے کی بات سے انکار کر دیا ۔ پولیس سے انصاف ملتا نہ دیکھ اس ماڈل نے خودکشی کرنے کی بھی کوشش کی ۔ ماڈل کا کہنا ہے کہ جب انصاف نہیں ملے گا ، تو وی زندہ رہ کر بھی کیا کرے گی ۔ متاثرہ ماڈل کے ساتھ ساتھ اس کی دوست بھی یہ الزام لگا رہی ہے کہ اس معاملے میں پولیس ان کی مدد نہیں کر رہی ہے ۔
First published: Apr 11, 2016 10:21 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading