Choose Municipal Ward
    CLICK HERE FOR DETAILED RESULTS
    ہوم » نیوز » No Category

    چین میں انسانی حقوق کےمعروف کارکن کو چھ سال قید کی سزا

    ہانگ کانگ:جنوبی چین کی ایک عدالت نے انسانی حقوق کے معروف کارکن گواوفیکسی یونگ کو چھ سال اور دو دیگر کارکنوں کو بالترتیب تین اور ڈھائی سال قید سزا سنائی۔

    • UNI
    • Last Updated: Nov 27, 2015 02:10 PM IST
    • Share this:
    • author image
      NEWS18-Urdu
    چین میں انسانی حقوق کےمعروف کارکن کو چھ سال قید کی سزا
    ہانگ کانگ:جنوبی چین کی ایک عدالت نے انسانی حقوق کے معروف کارکن گواوفیکسی یونگ کو چھ سال اور دو دیگر کارکنوں کو بالترتیب تین اور ڈھائی سال قید سزا سنائی۔

    ہانگ کانگ:جنوبی چین کی ایک عدالت نے انسانی حقوق کے معروف کارکن گواوفیکسی یونگ کو چھ سال اور دو دیگر کارکنوں کو بالترتیب تین اور ڈھائی سال قید سزا سنائی۔


    مسٹر گواو کے وکیل جانگ لی نے آج یہ اطلاع دی کہ انسانی حقوق کارکن کو کل ہی سزا سنائی گئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ انسانی حقوق کے کارکن ليویوانڈوگ کو تین سال اور سن دیشینگ کو ڈھائی سال کی قید کی سزا سنائی گئی ہے۔


    ۔48 سالہ مسٹرگواو اور مسٹر سن پر الزام ہے کہ انہوں نے سماجی نظام کو خراب کرنے کے لئے لوگوں کی بھیڑ جمع کی۔ ان دونوں نے میڈیا کی آزادی اور سنسر شپ کے معاملے پر جنوری 2013 میں ’دی سردن ویکلی‘اخبار کے دفتر کے باہر پرامن مظاہرہ کیا تھا۔ اس سے قبل بھی مسٹرگواو کو پانچ سال قید کی سزا دی جا چکی ہے۔


    مسٹر گواو کا اصلی نام یانگ ماودونگ ہے اور انہیں یہ سزا دینے سے دو سال سے زیادہ عرصہ پہلے گرفتار کر لیا گیا تھا۔ بین الاقوامی انسانی حقوق کی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق مسٹر سن کو حراست میں رہنے کے دوران طویل مدت تک ہتھکڑی اور پاؤں میں بیڑیاں پہنے کے لئے مجبور کیا گیا۔

    First published: Nov 27, 2015 02:07 PM IST
    corona virus btn
    corona virus btn
    Loading