صحافی جگیندر کے کیس میں بیٹے کا یو ٹرن ، کہا خود ہی لگائی تھی آگ

اتر پردیش کے سیاسی اور سماجی گلیاروں میں ہلچل مچا دینے والے صحافی جگیندر کے قتل کیس میں اس کے بیٹے نے اپنے موقف میں ڈرامائی تبدیلی کرتے ہوئے ریاستی وزیر رام مورتی ورما کوبے قصور قرار دیا ہے

Aug 01, 2015 11:34 PM IST | Updated on: Aug 01, 2015 11:42 PM IST
صحافی جگیندر کے کیس میں بیٹے کا یو ٹرن ، کہا خود ہی لگائی تھی آگ

شاہ جہاں پور :  اتر پردیش کے سیاسی اور سماجی گلیاروں میں ہلچل مچا دینے والے صحافی جگیندر کے قتل کیس میں اس کے بیٹے نے اپنے موقف میں ڈرامائی تبدیلی کرتے ہوئے ریاستی وزیر رام  مورتی ورما کوبے قصور قرار دیا ہے اور معاملے کی سی بی آئی جانچ کے سلسلے میں سپریم کورٹ میں دائراپنی عرضی واپس لے لی ہے ۔

جگیندر کے بیٹے راہل نے کیس کے ملزم مورتی ورما کو بے قصور قرار دیا اور کہا کہ اس کے والد نے پولیس کی طرف سے گرفتاری سے ہونے والی بدنامی سے بچنے کے لئے خود کو آگ لگائی تھی، لیکن آگ  زیادہ لگ گئی اور جگیندر بری طرح جھلس گئے ، جس کے بعد اس کی موت ہو گئی ۔

راہل نے کہا کہ ان کے والد جگیندر کچھ سیاستدانوں کی سازش کا شکار ہو گئے تھے، اس لئے انہوں نے ورما کے خلاف لکھنا شروع کر دیا تھا ۔  ورما پوری طرح بے قصور ہیں اور انہیں سیاسی سازش کے تحت پھنسایا جا رہا ہے ۔

اس نے کہا کہ معاملے کی سی بی آئی جانچ کے مطالبہ سے متعلق اس نے سپریم کورٹ میں جو پٹیشن دائر کی تھی، وہ اب واپس لے لی گئی ہے ۔ اس درمیان ورما پر عصمت دری کا الزام لگانے والی آنگن باڑی کارکن نے کہا کہ اس نے الزام جگیندر کے بہکاوے میں آکر لگائے تھے ۔

Loading...

بیٹے راگھویندر کے حلف نامہ کے مطابق میرے والد نے خود میری ماں کو اسپتال میں بتایا تھا کہ انہوں نے پٹرول چھڑک كر خود کو آگ لگائی تھی ، یہاں تک کہ کسی پولیس اہلکار کا بھی اس میں کوئی رول  نہیں تھا ۔ میری بیوی کو بھی پتہ نہیں تھا کہ یہ معاملہ اتنا آگے بڑھ جائے گا ۔  اس سے پہلے راگھویندر نے خود کہا تھا کہ اس کے والد کو وزیر کے اکسانے پر ہی پولیس اہلکاروں نے زندہ جلایا تھا ۔

قابل ذکر ہے کہ شاہ جہاں پور میں ایک جون کو دوپہر کے تقریبا تین بجے صحافی جگیندر سنگھ کے گھر کوتوالی کے اس وقت کے انچارج انسپکٹر شری پرکاش رائے، دو داروغہ اور چار سپاہیوں نے دبش دی تھی ۔ بند کمرے میں کیا ہوا، کوئی جان نہ سکا ، لیکن پولیس فورس کے جاتے ہی جگیندر شدید طور پر جلایا  ہوا پایا گیا ۔

جگیندر کے جسم کا 65 فیصد حصہ جھلس گیا تھا ۔ اہل خانہ انہیں فوری طور پر ضلع اسپتال لے گئے، جہاں مجسٹریٹ کے سامنے بیان میں جگیندر نے کہا تھا کہ زیر مورتی ورما کے اشارے پر انسپکٹر شری پرکاش رائے نے ان پر پٹرول چھڑك كر زندہ جلانے کی کوشش کی ۔  لکھنؤ کے سول اسپتال میں داخل جگیندر کی کچھ گھنٹوں بعد موت ہو گئی تھی ۔

Loading...