پڑھئے : کیسے غلطی سے ہندوستان پہنچا ڈیزائن اور تعمیر ہوگیا ایشیا کا سب سے بڑا چرچ

الہ آباد: کرسمس کا تہوار قریب ہے ، لیکن بہت ہی کم لوگ جانتے ہوں گے کہ ایشیا کا سب سے بڑا چرچ الہ آباد شہر میں واقع ہے۔ الہ آباد کا آل سینٹ كیتھڈرل چرچ 13 ویں صدی کے گوتھک اسٹائل میں بنا ہوا ہے۔اس کا ڈیزائن سر ولیم ایمرسن نے تیار کیاتھا ، جنہوں نے ہی کولکاتا میں وکٹوریہ میموریل کا ڈیزائن بھی بنایا تھا۔

Dec 23, 2015 11:35 PM IST | Updated on: Dec 23, 2015 11:36 PM IST
پڑھئے : کیسے غلطی سے ہندوستان پہنچا ڈیزائن اور تعمیر ہوگیا ایشیا کا سب سے بڑا چرچ

الہ آباد: کرسمس کا تہوار قریب ہے ، لیکن بہت ہی کم لوگ جانتے ہوں گے کہ ایشیا کا سب سے بڑا چرچ الہ آباد شہر میں واقع ہے۔ الہ آباد کا آل سینٹ كیتھڈرل چرچ 13 ویں صدی کے گوتھک اسٹائل میں بنا ہوا ہے۔اس کا ڈیزائن سر ولیم ایمرسن نے تیار کیاتھا ، جنہوں نے ہی کولکاتا میں وکٹوریہ میموریل کا ڈیزائن بھی بنایا تھا۔

كیتھيڈرل کےمیڈیا انچارج ریبرن گریبيل داؤد کے مطابق اس نقشہ کے حساب سے چرچ کی تعمیر آسٹریلیا میں ہونی تھی ، لیکن غلطی سے اس کا ڈیزائن ہندوستان پہنچ گیااور برطانوی سلطنت نے الہ آباد میں ہی اس کی تعمیر کرائی ۔

اس چرچ کا سنگ بنیاد 10 اپریل 1871 کو اس وقت کے لیفٹیننٹ گورنر کی بیوی مسز الزابیتھ ميور نے ڈالا تھا اور یہ عالیشان كیتھيڈرل تقریبا 40 سال میں بن کر تیار ہوا۔

اس چرچ میں بڑی تعداد میں عیسائی مذہب کو ماننے والے ملک سے ہی نہیں بلکہ بیرون ملک سے بھی پہنچتے ہیں۔ اس عمارت کی خصوصیت اس کا فن تعمیر اور اس کا اندرونی سجاوٹ ہے، جو قابل دید ہے۔

Loading...

اس كیتھڈرل سے وابستہ ایک اور دلچسپ بات ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ جب آل سینٹ كیتھڈرل کی تعمیر کا کام شروع کیا گیا، تو اس وقت بجٹ کی کمی کی وجہ سے اس کے اگلے حصہ میں بننے والے دو پلروں کی تعمیر کا کام مکمل نہیں ہو پایا ، جس کا تعمیراتی کام آج بھی باقی ہے۔

تاہم سینکڑوں سال قدیم اس چرچ کی حالت اب دن ب دن خراب ہوتی جا رہی ہے۔اس کی مرمت کے لئے ماہرین کی ٹیم بھی بلائی گئی تھی۔اس کی مرمت پر ہی ایک سے ڈیڑھ کروڑ کا خرچ آنے کی بات کہی جارہی ہے۔

Loading...