مدھیہ پردیش میں مسلسل بارش سے معمولات زندگی  ٹھپ

نيمچ : پوری ریاست میں نہ تھمنے والی بارش کا آج چوتھا دن ہے ، ان چار دنوں میں بارش نے پوری ریاست کو تربہ تر کر دیا ہے ۔

Jul 26, 2015 06:42 PM IST | Updated on: Jul 26, 2015 06:42 PM IST
مدھیہ پردیش میں مسلسل بارش سے معمولات زندگی  ٹھپ

نيمچ  :  پوری ریاست میں نہ تھمنے والی بارش کا آج چوتھا دن ہے ، ان چار دنوں میں بارش نے پوری ریاست کو تربہ تر کر دیا ہے ۔   دریا میں طغیانی ہے اور سڑکوں پر بھی تالاب جیسا منظر ہے ۔  بھاری بارش کی وجہ سے ریاست کے لوگوں کا زندگی درہم  برہم ہوگئی ہے ۔ بارش کے چوتھے دن نيمچ، مندسور اور رتلام میں سیلاب جیسے حالات پیدا ہو گئے ہیں ۔ نيمچ میں سنیچر کی رات سے ہی بھاری بارش ہو رہی ہے ،  جس سے کئی علاقے تالاب جیسا منظر پیش کررہے ہیں ۔ گاندھی ساگر ڈیم میں پہلے ہی  پانی کی سطح 1300 فٹ کے خطرے کے نشان تک پہنچ چکی تھی ، اب ہفتہ سے مسلسل ہو رہی بارش سے ڈیم کی آبی  سطح بھی مسلسل بڑھ رہی ہے ۔  اگر پانی کی سطح 1312 سے 1316 فٹ ہو جاتی ہے تو ڈیم کے نواح میں آباد 10 گاؤں کے 800 گھر مکمل طور پر ڈوب جائیں گے ۔

ریاست کے مالوا علاقے اور اس سے متصل راجستھان کے کئی اضلاع میں بھاری بارش کا سلسلہ جاری ہے اور اس کی وجہ سے مندسور میں اب حالات خراب ہو گئے ہیں ،  مندسور کی شیونا ندیمیں ہفتہ کو دوپہر کے بعد سے بھیانک سیلاب جیسے حالات پیدا ہو گئے ہیں اور تیز باريش کی وجہ سے  شہر کے نچلے علاقے کی کئی بستیوں میں پانی گھس گیا ہے ۔

رتلام میں بھی دو دنوں سے مسلسل بارش کی وجہ سے زندگی مکمل طور پر ٹھپ ہوگئی ہے ۔ گزشتہ 24 گھنٹوں میں شہر میں تقریبا 16 انچ بارش ریکارڈ ہوئی ہے ، بارش کی وجہ سے جہاں جگہ جگہ پانی بھر گیا ہے وہیں نچلی بستیوں میں کئی فٹ پانی اكٹھا ہو گیا ہے ۔ عالم یہ ہے ضلع کے کئی علاقوں میں ٹو وہیلر اور فور وہیلر تک ڈوب گئے ہیں ، سب سے زیادہ خراب حالت شاستری نگر، پی این ٹی کالونی اور هوم گارڈ کالونی کی ہے ،  جہاں پانی گھروں اور تعمیرات کے بیسمنٹ میں بھر چکا ہے ، جس کی وجہ سے لوگوں کو کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔

Loading...

Loading...