உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پی ایم مودی نے Raju Srivastava کے انتقال پر ظاہر کیا افسوس، بولے۔ دلوں میں زندہ رہوگے

    راجو سریواستو کی موت پر پی ایم مودی نے غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ راجو سریواستو نے ہماری زندگی کو ہنسی، مزاح اور مثبتیت سے روشن کیا۔ وہ بہت جلد ہم سے رخصت ہو گئے، لیکن...

    راجو سریواستو کی موت پر پی ایم مودی نے غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ راجو سریواستو نے ہماری زندگی کو ہنسی، مزاح اور مثبتیت سے روشن کیا۔ وہ بہت جلد ہم سے رخصت ہو گئے، لیکن...

    راجو سریواستو کی موت پر پی ایم مودی نے غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ راجو سریواستو نے ہماری زندگی کو ہنسی، مزاح اور مثبتیت سے روشن کیا۔ وہ بہت جلد ہم سے رخصت ہو گئے، لیکن...

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | Mumbai
    • Share this:
      مزاحیہ لطیفوں اور کامیڈی سے سب کو ہنسانے والے مشہور کامیڈین راجو سریواستو اب ہمارے بیچنہیں رہے۔ کامیڈین راجو سریواستو کا بدھ کو دہلی کے ایمس اسپتال میں انتقال ہوگیا۔ راجو سریواستو کی عمر 58 سال تھی اور وہ 40 دن سے زیادہ اسپتال میں داخل تھے۔ انہیں 10 اگست کو دہلی کے ایک ہوٹل میں جم کے دوران دل کا دورہ پڑا تھا جس کے بعد انہیں آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز (ایمس) میں داخل کرایا گیا تھا، جہاں ان کی 'انجیو پلاسٹی' بھی کی گئی تھی۔ تب سے وہ وینٹی لیٹر پر تھے اور ہوش میں نہیں آئے تھے۔ راجو شریواستو کی موت سے ملک میں سوگ کی لہر ہے۔



      کامیڈین راجو سریواستو کا انتقال، 41 دنوں تک AIIMSمیں لڑی موت سے جنگ

      خواتین کھلاڑیوں کو ٹوائلٹ میں دیا گیا کھانا، اسپورٹس آفیسر انیمیش سکسینہ معطل

      راجو سریواستو کی موت پر پی ایم مودی نے غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ راجو سریواستو نے ہماری زندگی کو ہنسی، مزاح اور مثبتیت سے روشن کیا۔ وہ بہت جلد ہم سے رخصت ہو گئے، لیکن وہ اپنے بھرپور کام کے ذریعے ان گنت لوگوں کے دلوں میں برسوں زندہ رہیں گے۔ ان کا انتقال افسوسناک ہے۔ ان کے اہل خانہ اور مداحوں  کیلئے تعزیت۔ اوم شانتی۔

      ذرائع کی مانیں تو راجو شریواستو کی آخری رسومات کل صبح 9:30 بجے دہلی میں ادا کی جائیں گی۔ راجو شریواستو کا جسد خاکی کو ایمس سے دشرتھ پوری لے جایا جائے گا۔ راجو شریواستو کے بھتیجے مینک سریواستو کا گھر دوارکا میں ہے۔ غالباً راجو سریواستو کی آخری رسومات کل صبح وہیں ادا کی جائیں گی۔ تاہم، خاندان کے کچھ افراد راجو سریواستو کی آخری رسومات ان کی جائے پیدائش کانپور میں ادا کرنے کے حق میں تھے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: