உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    قیدی کا سنسنی خیز الزام، جیل سپرنٹنڈنٹ نے بری طرح پیٹا، پٹھ پر لکھا دہشت گرد اور پھر۔۔۔۔

    قیدی کی کمر پر پنجابی زبان میں لکھا دہشت گرد

    قیدی کی کمر پر پنجابی زبان میں لکھا دہشت گرد

    قیدی نے دعویٰ کیا کہ 'قیدیوں کی حالت قابل رحم ہے۔ ایڈز اور ہیپاٹائٹس میں مبتلا افراد کو الگ وارڈز میں نہیں رکھا جاتا۔ جب بھی میں نے بدتمیزی کا معاملہ اٹھانے کی کوشش کی تو جیل سپرنٹنڈنٹ نے مجھے مارا پیٹا۔

    • Share this:
      چنڈی گڑھ: پنجاب کے ضلع برنالہ میں ایک زیر سماعت قیدی   (Undertrial Prisoner) نے جیل سپرنٹنڈنٹ پر ظلم و تشدد کرنے اور اس کی کمر پر پنجابی زبان میں 'دہشت گرد' لکھنے کا الزام لگایا ہے۔ اس کے اس الزام کے بعد ریاست کے نائب وزیر اعلیٰ سکھجندر سنگھ رندھاوا نے اس دعوے کی مکمل تحقیقات کا حکم دیا ہے۔ کرم جیت سنگھ نامی 28 سالہ قیدی نے مانسا ضلع کی ایک عدالت کے سامنے یہ الزام لگایا۔ اس دوران عدالت میں NDPS (Narcotic Drugs and Psychotropic Substances Act) کے تحت دائر ایک کیس کی سماعت ہو رہی تھی۔

      قیدی نے دعویٰ کیا کہ 'قیدیوں کی حالت قابل رحم ہے۔ ایڈز اور ہیپاٹائٹس میں مبتلا افراد کو الگ وارڈز میں نہیں رکھا جاتا۔ جب بھی میں نے بدتمیزی کا معاملہ اٹھانے کی کوشش کی تو جیل سپرنٹنڈنٹ نے مجھے مارا پیٹا۔ وہیں جیل سپرنٹنڈنٹ بلبیر سنگھ نے تمام الزامات کی تردید کی ہے۔ انہوں  نے بارہا کرم جیت سنگھ کو اس طرح کی کہانیاں بنانے والا قیدی بتایا ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ اسے ایسی من گھڑت کہانیاں بنانے کی عادت ہے۔

      جیل سپرنٹنڈنٹ نے کہا، ' اس پر این ڈی پی ایس ایکٹ سے لے کر قتل تک کے 11 مقدمات  چل رہے ہیں۔ اب وہ یہ الزام اس لیے لگا رہا ہے کہ وہ ہم سے ناراض ہے۔ وہ یہ کام اس وقت بھی کرتا تھا جب وہ سنگرور ضلع میں بند تھا۔ سپرنٹنڈنٹ نے مزید دعویٰ کیا کہ کرم جیت سنگھ ایک بار پولیس کی حراست سے فرار بھی ہوا تھا۔ دوسری جانب نائب وزیر اعلیٰ رندھاوا نے اے ڈی جی پی (جیل خانہ) پی کے سنہا کو قیدی کی گہرائی سے تفتیش اور طبی معائنہ کرنے کا حکم دیا ہے۔ فیروز پور کے ڈی آئی جی تاجندر سنگھ مور کو تفتیشی افسر مقرر کیا گیا ہے۔ وہ آج سے اس معاملے میں  پوچھ گچھ شروع کریں گے۔

      اس معاملے میں اکالی دل کے ترجمان منجندر سنگھ سرسا نے ریاست کی کانگریس حکومت کو نشانہ بنایا ہے۔ اس نے قیدی کی تصویر بھی شیئر کی ہے۔ انہوں نے مطالبہ کیا ہے کہ جیل سپرنٹنڈنٹ کو فوری طور پر معطل کیا جائے اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر سخت کارروائی کی جائے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: