تین طلاق پر مرکز کی مودی حکومت کی مداخلت مسلمانوں کو قطعی منظور نہیں: اعظم خاں

رام پور۔ اترپردیش کے كابينی وزیر اعظم خاں نے کہا کہ تین طلاق کے مسئلے پر مسلمانوں کو مرکز کی نریندر مودی حکومت کی مداخلت قطعی منظور نہیں ہے۔

Nov 27, 2016 09:41 AM IST | Updated on: Nov 27, 2016 09:41 AM IST
تین طلاق پر مرکز کی مودی حکومت کی مداخلت مسلمانوں کو قطعی منظور نہیں: اعظم خاں

رام پور۔ اترپردیش کے كابينی وزیر اعظم خاں نے  کہا کہ تین طلاق کے مسئلے پر مسلمانوں کو مرکز کی نریندر مودی حکومت کی مداخلت قطعی منظور نہیں ہے۔ وزیر اعلی اکھلیش یادو کی یہاں ایک جلسہ عام میں مسٹر خاں نے کہا ’’تین طلاق کے معاملے میں نریندر مودی حکومت جان بوجھ کر مداخلت کر رہی ہے۔ مسلمانوں کو یہ قطعی برداشت نہیں ہے۔ یہ فیصلہ شرعی قانون کرے گا۔ اس میں بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) یا ان کے رہنما آر ایس ایس کی رائے کی کوئی ضرورت نہیں ہے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ جس طرح ہندو میرج ایکٹ میں مداخلت کرنے کا مسلمانوں کو کوئی حق نہیں ہے۔ اسی طرح مسلمان بھی شریعت سے کھلواڑ کی اجازت کسی کو نہیں دے گا۔

شہری ترقی کے وزیر نے کہا کہ مرکزی حکومت کے نوٹ منسوخی کے فیصلے نے ملک کے کروڑوں لوگوں کو بحران میں دھکیل دیا ہے۔ نیپال نے ہندوستانی کرنسی کو رجیکٹ کر دیا ہے۔ دنیا کو ہماری مدد کرنی چاہئے۔ انہوں نے کہا ’’نوٹ کی منسوخی کے فیصلے پر وزیر اعظم کا وہ بیان بدقسمتی کی بات ہے جس میں انہوں نے ہم کو بے ایمان اور کالابازاری کرنے والا کہا ہے۔ ملک کی 70 سے 76 فیصد آبادی کو ذلیل کیا ہے۔ بینکوں میں لگنے والی قطار عکاسی کرتی ہے کہ لوگ کس قدر پریشان ہیں۔

پارٹی کے جنرل سکریٹری امر سنگھ پر بلاواسطہ طور پر حملہ کرتے ہوئے مسٹر خان نے کہا ’’سازشیں کرنے والے آج پھر سمجھ لیں۔ وہ کل بھی ذلیل تھے آج بھی ذلیل ہیں اور کل بھی ذلیل رہیں گے‘‘۔

Loading...

Loading...