تیوتيا پرحملہ : شوہر کے قتل کا بدلہ لینے کا شک، خاتون کانسٹبل حراست میں

یوپی کے مراد نگر میں بی جے پی لیڈر برج پال تیوتیا پر اے کے 47 سے قاتلانہ حملہ کے بعد ریاستی حکومت سے لے کر مرکزی حکومت تک میں ہلچل تیز ہو گئی ہے

Aug 12, 2016 12:17 PM IST | Updated on: Aug 12, 2016 03:23 PM IST
تیوتيا پرحملہ : شوہر کے قتل  کا بدلہ لینے کا شک، خاتون کانسٹبل حراست میں

مرادنگر : یوپی کے مراد نگر میں بی جے پی لیڈر برج پال تیوتیا پر اے کے 47 سے قاتلانہ حملہ کے بعد ریاستی حکومت سے لے کر مرکزی حکومت تک میں ہلچل تیز ہو گئی ہے۔ وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے خود حکام سے بات چیت كر کے پورے معاملہ کی معلومات حاصل کی۔ یوپی کے ڈی جی پی جاويد احمد نے بتایا کہ حملے میں استعمال کی گئی گاڑی برآمد کر لی گئی ہے۔ پولیس اور فورینسک ٹیمیں کئی پہلوؤں سے جانچ کر رہی ہیں۔ تیوتيا کو سیکورٹی کیوں نہیں دی گئی، اس کی بھی جانچ کی جائے گی۔

دریں اثنا باغپت میں تعینات خاتون کانسٹبل سنیتا حسن پوریا کو حراست میں لیا گیا ہے۔ پولیس نے بتایا کہ ایسا پوچھ گچھ کرنے کے لئے کیا گیا ہے۔ سنیتا راکیش کی بیوی ہے ، جو پہلے دہلی پولیس میں تھا ، لیکن پھر برخاست کردیا گیا تھا اور بعد میں بدنام زمانہ بدمعاش بن گیا تھا۔ یوپی میں انکاؤنٹر میں راکیش مارا گیا تھا۔ تیوتيا پر شک تھا کہ انہوں نے اس معاملے میں مخبری کی تھی۔

ادھر حملہ کے بعد سے ہی اکھلیش حکومت پر چوطرفہ تنقید شروع ہوگئی ہے۔ مرکزی وزیر مختار عباس نقوی نے کہا کہ 'اتر پردیش میں سماج دشمن عناصر اور غنڈے کھلے عام کام کر رہے ہیں، یہ بہت افسوس کی بات ہے۔ ایسا لگتا ہے جیسے وہاں حکومت نام کی چیز رہ نہیں گئی ہے۔ یہ سنگین ہے، المناک ہے۔ غازی آباد سے بی جے پی لیڈر وی کے سنگھ دیر رات اسپتال پہنچے۔ انہوں نے کہا کہ یہ واقعہ افسوسناک ہے۔ سنگھ نے کہا کہ 'ہم نہیں جانتے کہ اس کے پیچھے کون ہے۔ پہلی بات یہ ہے کہ وہ محفوظ ہیں۔ ' بی ایس پی صدر مایاوتی نے کہا کہ اتر پردیش میں قانون و انتظام کی صورتحال بد سے بدتر ہو چکی ہے۔ اگر اکھلیش حکومت نہیں سنبھال پا رہے ہیں ، تو استعفی دے دیں۔

یوگی آدتیہ ناتھ نے کہا کہ یہ یوپی میں جنگل راج کی ایک مثال ہے۔ بی جے پی کے ریاستی صدر کیشو پرساد موریہ نے ایس پی حکومت پر حملہ کرتے ہوئے کہا کہ قانون و انتظام کی صورتحال ختم ہو گئی ہے۔ حکومت مجرموں کے ساتھ ہے اور ان سے ڈر کر کام کر رہی ہے۔

Loading...

دوسری طرف اے ڈی جی لا اینڈ آرڈر دلجیت چودھری نے بتایا کہ یہ پرانی رنجش کا معاملہ نظر آرہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کچھ لوگوں کی نشاندہی کی گئی ہے اور بہت جلد کیس کو حل کرلیا جائے گا۔ جن لوگوں کی شناخت کی گئی ہے، ان کے ساتھ تیوتيا کی پرانی رنجش ہے۔ پولیس نے تیوتیا کو سیکورٹی کیوں نہیں دی ، اس کی بھی جانچ ہوگی۔

Loading...