تریپورا کی تاریخی جیت نریندر مودی کی پالیسیوں کا نتیجہ: امت شاہ

نئی دہلی۔ بھارتیہ جنتا پارٹی نے شمال مشرق کی تین ریاستوں کے اسمبلی انتخابات میں پارٹی کو ملی کامیابی کو وزیر اعظم نریندر مودی حکومت کی پالیسیوں کا نتیجہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ کرناٹک میں بھی اسمبلی الیکشن میں پارٹی کو ایسی ہی کامیابی ملے گی۔

Mar 03, 2018 06:32 PM IST | Updated on: Mar 03, 2018 06:32 PM IST
تریپورا کی تاریخی جیت نریندر مودی کی پالیسیوں کا نتیجہ: امت شاہ

بی جے پی کے قومی صدر امت شاہ: فائل فوٹو۔

نئی دہلی۔  بھارتیہ جنتا پارٹی نے شمال مشرق کی تین ریاستوں کے اسمبلی انتخابات میں پارٹی کو ملی کامیابی کو وزیر اعظم نریندر مودی حکومت کی پالیسیوں کا نتیجہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ کرناٹک میں بھی اسمبلی الیکشن میں پارٹی کو ایسی ہی کامیابی ملے گی۔ بی جے پی کے صدر امت شاہ نے تریپورا‘ ناگالینڈ‘ میگھالیہ کے اسمبلی انتخابات کے نتائج پر یہاں پارٹی ہیڈکوارٹر میں نامہ نگاروں سے کہا کہ تریپورا کے نتائج تاریخی ہیں۔ وہاں 2013 میں بی جے پی کو صرف1.3 فیصد ووٹ ملی تھی اور اس کا ایک بھی امیدوار کامیاب نہیں ہوپایا تھا۔ ایک امیدوار کو چھوڑ کر پارٹی کے تمام امیدواروں کی ضمانت ضبط ہوگئی تھی۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی وہاں اکیلے واضح اکثریت حاصل کررہی ہے اور حلیف جماعت کے ساتھ اس کا اتحاد 43 سیٹیں جیت رہا ہے۔

بی جے پی صدر نے کہا کہ ان نتائج سے واضح ہوگیا ہے کہ بائیں بازو کی جماعتوں کو اب کوئی پسند نہیں کرتا۔ انہوں نے کہا کہ لیفٹ اب ملک کے کسی بھی حصے کے لئے ’رائٹ‘ نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ مودی حکومت نے غریبوں ‘ دلتوں اور قبائلیوں کے مفادات میں کام کیا جس کی وجہ سے تریپورا کے قبائلی علاقوں میں بیس سیٹوں پر این ڈی اے اتحاد کی فتح ہوئی ہے۔  شاہ نے کہا کہ مودی حکومت نے اقتدار میں آنے کے بعد شمال مشرق خطہ میں ترقیاتی کاموں کو تیزی دی ہے جس کی وجہ سے وہاں کے لوگوں نے این ڈی اے کو زبردست حمایت دی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پہلے بھی شمال مشرق کے لئے رقم الاٹ کی جاتی تھی لیکن ترقی نہیں ہوتی تھی۔ اب وہاں ترقی دکھائی دے رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ناگالینڈ میں بی جے پی کو دس سیٹیں ملی ہیں اور اسے 12.1 فیصد ووٹ ملا ہے جب کہ 2013 کے الیکشن میں اسے صرف ایک سیٹ ملی تھی۔ انہوں نے کہا کہ اس ریاست میں این ڈی اے کو پندرہ سیٹوں پر 37فیصد ووٹ ملا ہے۔ بی جے پی صدر نے کہا کہ میگھالیہ میں کانگریس کو اکثریت نہیں ملی ہے۔ انہوں نے میگھالیہ میں توڑ پھوڑ کی سیاست سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ ممبران اسمبلی جس کی حمایت کریں گے اس کی حکومت بنے گی۔ تینوں ریاستوں میں کانگریس کو مسترد کردیا گیا ہے اور عوام مودی کی قیادت کو تسلیم کررہی ہے۔

Loading...

Loading...