راجندر کمار کے دفتر پر چھاپہ کا معاملہ : ہائی کورٹ کا نچلی عدالت کے فیصلہ پر روک سے انکار ، کیجریوال سرکار سے جواب طلب

نئی دہلی : دہلی ہائی کورٹ نے دہلی حکومت کے پرنسپل سکریٹری راجندر کمار کے دفتر سے ضبط دستاویزات کو واپس کرنے کی نچلی عدالت کے فیصلے کے خلاف مرکزی تفتیشی بیورو(سی بی آئی)کی درخواست پر کیجریوال حکومت سے کل تک جواب طلب کیا ہے۔

Jan 22, 2016 12:14 AM IST | Updated on: Jan 22, 2016 12:14 AM IST
راجندر کمار کے دفتر پر چھاپہ کا معاملہ : ہائی کورٹ کا نچلی عدالت کے فیصلہ پر روک سے انکار ، کیجریوال سرکار سے جواب طلب

نئی دہلی : دہلی ہائی کورٹ نے دہلی حکومت کے پرنسپل سکریٹری راجندر کمار کے دفتر سے ضبط دستاویزات کو واپس کرنے کی نچلی عدالت کے فیصلے کے خلاف مرکزی تفتیشی بیورو(سی بی آئی)کی درخواست پر کیجریوال حکومت سے کل تک جواب طلب کیا ہے۔

جسٹس پی ایس تیجی نے سی بی آئی کی دلیلیں سننے کے بعد ریاستی حکومت اور مسٹر کمار کو نوٹس جاری کرتے ہوئے انہیں جواب کے لئے کل تک کا وقت دیا ہے۔ تاہم عدالت نے نچلی عدالت کے حکم پر عبوری روک لگانے سے فی الحال انکار کر دیا۔

کیس کی سماعت کے لئے 25 جنوری کی تاریخ مقرر کی گئی ہے۔ سی بی آئی کے وکیل نے دلیل دی کہ جانچ ایجنسی کو متعلقہ دستاویزات کو تحقیقات سے پہلے کسی کے سپرد کا حکم غیر مناسب ہے۔ جانچ ایجنسی نے آج ہی کیس کا خاص طور سے ذکر کیا تھا، جس کے بعد عدالت نے اس سماعت کے لئے حامی بھر دی تھی۔

وکیل سونیا ماتھر کی طرف سے دائر درخواست میں سی بی آئی نے ہائی کورٹ میں دلیل دی تھی کہ نچلی عدالت کے فیصلے پر روک لگائی جانی چاہئے، کیونکہ ابھی اس معاملے کی جانچ چل رہی ہے اور گواہوں سے ابھی تک پوچھ گچھ پوری نہیں ہوئی ہے۔

Loading...

سی بی آئی کی خصوصی عدالت نے دہلی حکومت کی درخواست کا نمٹارہ کرتے ہوئے کل جانچ ایجنسی کو مسٹر کمار کے دفتر سے 15 دسمبر کو ضبط دستاویزات کو لوٹانے کی ہدایت دی تھی۔ سی بی آئی مینول کا حوالہ دیتے ہوئے خصوصی جج اجے کمار جین نے اس کی تنقید کی تھی۔

Loading...