بارہویں کی طالبہ سے اجتماعی عصمت دری ، ہاتھ منھ باندھ کر تالاب میں پھینکا ، 6 گرفتار

نابالغ لڑکی نے پولیس کو دی شکایت میں بتایا کہ اسی گاؤں کے دو لوگوں دو لوگ بائک پر اس کا اغوا کر کے کھیتوں میں بنے ایک کمرے میں لے گئے۔

Oct 27, 2018 09:16 PM IST | Updated on: Oct 27, 2018 09:24 PM IST
بارہویں کی طالبہ سے اجتماعی عصمت دری ، ہاتھ منھ باندھ کر تالاب میں پھینکا ، 6 گرفتار

علامتی تصویر

ہریانہ کے جیند میں اجتماعی عصمت دری کا ایک سنسنی خیز معاملہ سامنے آیا ہے۔ ضلع کے جلانہ علاقے میں بارہوہں کی طالبہ سے اجتماعی عصمت دری کے بعد اس کے ہاتھ منھ کو باندھ کرتالاب میں پھینک کر جان سے مارنے کی کوشش کی گئی۔ پولیس نے اس معاملے میں نصف درجن افراد کے خلاف اجتماعی عصمت دری اور اغوا اور جان سے مارنے کی کوشش کا معاملہ درج کیا ہے۔ پولیس نے سبھی ملزمان کو گرفتار کر لیا ہے اور ان سے پوچھ گچھ کی جارہی ہے۔

جلانہ تھانہ علاقے کے ایک گاؤں کی 12 ویں کلاس میں پڑھنے والی نابالغ لڑکی نے پولیس کو دی شکایت میں بتایا کہ اسی گاؤں کے دو لوگوں دو لوگ بائک پر اس کا اغوا کر کے کھیتوں میں بنے ایک کمرے میں لے گئے۔ جہاں چار نوجوان پہلے سے ہی موجوس تھے۔ پولیس نے بتایا کہ دو نوجوانوں نے اس کے ساتھ ریپ کیا اور چاروں نوجوانوں نے اس کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کی۔

Loading...

اس کے بعد ملزموں نے متاثرہ لڑکی کے کپڑے سے منھ اور ہاتھ پاؤں باندھ کر گاؤں کے تالاب میں ڈال کر مارنے کی کوشش کی لیکن چالبہ کے اہل کانہ اس کی تلاش کرتے ہوئے پہنچ گئے۔ جس کے بعد سبھی ملزمان موقع سے فرار ہو گئے۔

یہ بھی پڑھیں : سیکس پاور کی دوائیں کھاکرشوہرکرتا تھا ریپ ، برداشت کی حد ٹوٹ گئی تو بیوی نے اٹھایا یہ قدم

پولیس نے طالبہ کی شکایت پر گاؤں کے 6 لوگوں کے خلاف معاملہ درج کیا ہے۔

Loading...