گروگرام : نمازپڑھنے پر ہنگامہ جاری ، 3 دنوں تک میراتھن میٹنگ کے بعد بھی نہیں نکلا کوئی حل

گروگرام میں نماز کو لےکر ہنگامہ جاری ہے ۔ کھلے میں مسلم برادری کے لوگوں کی نماز پر مچے بوال کو روکنے کے لئے انتظامیہ مسلسل ہندو مسلم تنظیموں سے میراتھن میٹنگ کر رہاہے۔

May 09, 2018 10:45 PM IST | Updated on: May 10, 2018 12:08 AM IST
گروگرام : نمازپڑھنے پر ہنگامہ جاری ، 3 دنوں تک میراتھن میٹنگ کے بعد بھی نہیں نکلا کوئی حل

علامیت تصویر

گروگرام میں نماز ادا کرنے کے معاملہ پر ہنگامہ آرای جاری ہے ۔میدان میں مسلمانوں کے نمازاداکرنے پر ہوے کہرام کو روکنے کے لئے انتظامیہ مسلسل ہندو مسلم تنظیموں سے میراتھن میٹنگ کر رہی ہے۔

تیسرے دن بھی میٹنگ جاری رہی

سب سے پہلے مسلم تنظیم اور وقف بورڈ کے اہلکاروں کے ساتھ انظامیہ نے میٹنگ کی اور امن کے ساتھ معاملہ کو حل کرنے کی کوشش کی گئی ، لیکن کوئی حل نہیں نکل سکا۔ بلکہ وقف بورڈ کی جانب سے انتظامیہ کو 19 مساجد پر قبصہ کی ایک لسٹ دی گئی اور کہا گیا کہ مسجدوں پر جب قبصہ ہے تو پھر نماز کہاں اور کیسے ادا کریں ۔ جب تک نئی مسجد یں اور پرانی قبصہ والی مسجدیں آزاد نہیں ہو جاتیں تب تک انظامیہ کوئی مقام فراہم کراے تاکہ مسلم برادری کے لوگوں کو جمعہ اور رمضان میں نمازاداکرنے میں کوئی دشواری درپیش نہ ہو۔

Loading...

تو دوسری جانب مسلم تنظیموں کی میٹنگ کے بعد انتظامیہ نے ڈی سی اور سی پی کے موجودگی میں ایک میٹنگ ہندو تنظیموں کے ساتھ کی اور معاملہ کو پر امن ختم کرنے کی کوشش کی ۔ لیکن مسلسل 2 گھنٹے تک چلی اس میٹنگ کا بھی کوئی حل نہیں نکل سکا۔ علاوہ ازیں ہندو تنظیموں نے اس معاملہ کو اب انتظامیہ کے ذمہ کر کے اپنے آپ کو پورے معاملہ سے نکال لیا ہے ۔

ہندو تنظیموں کے مطابق تو کھلے میں مسلم برادری کے لوگ نماز ادا نہیں کریں اور اس کی زمہ داری بھی انتظامیہ لے ۔ تاہم آج کی میٹنگ بھی بے نتیجہ رہی ہے ۔

گروگرام کے ڈی سی کے مطابق بات چیت کا دور جاری ہے اور جلد ہی اس معاملہ کا حل نکالنے میں وہ کامیاب ہوں گے ۔ انتظامیہ نے نہ صرف جمعہ کی نماز جبکہ رمضان کی نماز وں کے تحت بھی دونوں تنظیموں کے لوگوں کے درمیان آپسی ہم آہنگی قائم کرنے کی بات کہی ہے ۔ ساتھ ہی وقف بورڈ کی 19 مسجدوں کی لسٹ پر قبصہ کی جانکاری دیتے ہوئے ڈی سی نے کہا کہ 19 میں سے 12 مسجدوں پر کوئی قبصہ نہیں ہے اور جن پر قبصہ ہے انہیں جلد ہی قبضہ سے آزاد کرا دیا جائے گا۔

Loading...