دہشت گردی کا اسلام سے کوئی لینا دینا نہیں ، دارالعلوم دیوبند میں امام حرم کا خطاب

دیوبند : سعودی عرب کی کعبہ مسجد کے امام شیخ صالح نے آج کہا کہ اسلام مذہب کا دہشت گردی سے کوئی لینا دینا نہیں ۔ امام شیخ صالح نے یہاں کہا کہ دہشت گردی کا کوئی مذہب نہیں ہوتا. مسلمانوں کو دہشت گردی سے سب سے زیادہ نقصان ہو رہا ہے. دہشت گردی کو دنیا سے ختم کیا جانا چاہیے۔

Apr 06, 2016 12:10 AM IST | Updated on: Apr 06, 2016 12:11 AM IST
دہشت گردی کا اسلام سے کوئی لینا دینا نہیں ، دارالعلوم دیوبند میں امام حرم کا خطاب

دیوبند :  سعودی عرب کی کعبہ مسجد کے امام شیخ صالح نے آج کہا کہ اسلام مذہب کا دہشت گردی سے کوئی لینا دینا نہیں ۔  امام شیخ صالح نے یہاں کہا کہ دہشت گردی کا کوئی مذہب نہیں ہوتا. مسلمانوں کو دہشت گردی سے سب سے زیادہ نقصان ہو رہا ہے. دہشت گردی کو دنیا سے ختم کیا جانا چاہیے۔

کعبہ کے امام شیخ صالح دیوبندی مسلک کی ڈیڑھ سو سال پرانی اسلامی تعلیم اور ثقافت کے ادارے دارالعلوم کی رشیدیہ مسجد میں ہزاروں نمازیوں کو ظہر کی نماز پڑھانے سے پہلے خطاب کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ اسلام میں بزرگ، معصوم بچوں اور عورت کے قتل کو غیر مناسب بتایا گیا ہے. یہاں تک کی جنگ میں بھی ایسا کرنے کی اجازت نہیں ہے۔

امام شیخ صالح نے مسلمانوں پر زور دیا کہ وہ اسلام کے پیغام کو قبول کرتے ہوئے تمام طرح کے باہمی اختلافات کو بھلا کر متحد ہونے کا کام کریں. دنیا کے مسلمانوں کا ایک اللہ، ایک نبی اور ایک کتاب قرآن میں یقین ہے۔اس لئے فرقوں میں تقسیم ہو کرنہیں رہنا ٹھیک نہیں ہے۔شیخ صالح نے کہا کہ قرآن میں مذہب کو ماننے کے لئے کسی سے زبردستی کرنے کی اجازت نہیں ہے. مسلمانوں پر کوئی ظلم ہو تو انہیں اس کی مخالفت کرنے کا حق ہے۔

27ecff02-1d9c-4651-a15d-2a4d3dea3996

Loading...

امام صالح نے کہا کہ دنیا میں ٹیکنالوجی اور فوجی طاقت بڑھی ہے اور اتنا ہی ظلم اور نادانی بھی بڑھی ہے. ایسے میں اسلام کی روشنی میں امن اور ہم آہنگی کا پیغام پھیلایا جا سکتا ہے۔  انہوں نے کہا کہ وہ سعودی عرب کے بادشاہ سلمان بن عبدالعزیز السعود کی ہدایت پر ہندوستان میں اس وقت امن اور امن کا پیغام دینے آئے جب ہندستانی وزیر اعظم نریندر مودی سعودی عرب میں بادشاہ کے مہمان بنے ہوئے تھے۔

انہوں نے کہا کہ وہ ہندستان کی گنگا جمنی تہذیب اور ہندو مسلمانوں کے درمیان بھائی چارے اور ہم آہنگی کے گہرے تعلقات سے بہت خوش ہیں۔ انہوں نے حکومت اور انتظامیہ کی طرف سے ان کے دورے کے لئے کئے گئے خاص انتظامات کی بھی تعریف کی۔

shekh saleh (2)

امام صالح نے اپنے 15 منٹ کے خطاب میں دارالعلوم کی اسلام کی خدمات کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ یہاں تعلیم یافتہ طالب علم اور استاد دنیا بھر میں پھیلے ہوئے ہیں جس سے دارالعلوم کی اہمیت کا پتہ چلتا ہے۔  سعودی عرب کے امام حرم دیوبند میں مسلمانوں کے97 سال پرانے مذہبی اور سماجی ادارے جمعیت العلمائے ہند کے موجودہ قومی صدر اور دارالعلوم کے حدیث کے استاد مولانا ارشد مدنی کی دعوت پر آئے تھے۔ مولانا مدنی کے دعوت نامہ پر اس سے قبل بھی وہاں کے دو امام دیوبند آ چکے ہیں. 26 مارچ 2011 کو عبد الرحمن بن عبدالعزیز السدیش اور چار مارچ 2012 کو ڈاکٹر سعود بن ابراہیم دارالعلوم دیوبند آئے تھے۔

shekh saleh (1)

کعبہ کے امام آج دہلی سے دیوبند پہنچے۔مولانا ارشد مدنی اور دیگر علماؤں نے ان کا استقبال کیا۔ وہ ساڑھے 11 بجے رشیدیہ مسجد پہنچے۔خطبہ اور ظہر کی نماز کے بعد انہوں نے دارالعلوم کے گیسٹ ہاؤس میں علماء سے ملاقات کی۔ شیخ صالح کی سیکورٹی کے لئے پولیس نے پختہ انتظامات کئے تھے۔

Loading...