رام کوئی بھگوان نہیں، گائے کو'ماتا' کہنے والوں کے دماغ میں بھرا ہے گوبر: مارکنڈے کاٹجو

اتراکھنڈ کی راجدھانی دہرہ دون میں منعقدہ ایک پروگرام میں حصہ لینے آئے مارکنڈے کاٹجونےنیوز18 سے بات چیت میں کہا کہ رام بھگوان نہیں، بلکہ ایک عام آدمی تھے۔

Feb 03, 2019 06:04 PM IST | Updated on: Feb 03, 2019 06:04 PM IST
رام کوئی بھگوان نہیں، گائے کو'ماتا' کہنے والوں کے دماغ میں بھرا ہے گوبر: مارکنڈے کاٹجو

جسٹس مارکنڈے کاٹجو: فائل فوٹو

اپنے جارحانہ بیانں سے سرخیوں میں رہنے والے سپریم کورٹ کے سابق جسٹس اورپریس کونسل آف انڈیا (پی سی آئی) کے چیئرمین رہے مارکنڈے کاٹجوکا کہنا ہے کہ رام کوئی بھگوان نہیں تھے، وہ عام آدمی تھے۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے گائے کو'ماتا' کہنے پربھی اعتراض ظاہرکیا۔ ان کا کہنا تھا کہ ایک جانورکسی انسان کی ماں کیسے ہوسکتی ہے؟

اتراکھنڈ کی راجدھانی دہرہ دون میں منعقدہ ایک پروگرام میں حصہ لینے آئے مارکنڈے کاٹجو نے نیوز 18 سے بات چیت میں کہا کہ رام بھگوان نہیں، بلکہ ایک عام آدمی تھے۔ والمیکی  کے اصل رامائن ایڈیشن میں انہیں ویسا ہی بتایا گیا ہے۔ وہیں گائےکو'ماتا' کہے جانے پر اعتراض ظاہرکرتے ہوئے کاٹجونے کہا کہ گائے بھی گھوڑے اورکتے کی طرح ایک جانور ہے۔ ایسے میں جولوگ گائے کوماتا کہتے ہیں، ان کے دماغ میں گوبربھرا ہے۔

Loading...

جسٹس کاٹجونے کہا کہ یہ سب آئندہ لوک سبھا الیکشن میں ووٹ حاصل کرنے کے لئے سیاست کی جارہی ہے۔ رام مندرکوئی موضوع نہیں ہے۔ اصل میں لوگوں کی صرف توجہ بھٹکائی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ لوگ چاہے بھوکے مرجائیں، بے روزگاررہیں، اسے کوئی موضوع نہیں مان رہا ہے اوررام مندرکو موضوع بنائے بیٹھے ہیں۔

رابن سنگھ چوہان کی رپورٹ

Loading...