عدالت کا راجندر کمار کے دفتر پر چھاپے میں ضبط کچھ دستاویزات کو واپس کرنے کا حکم ، کیجریوال نے مودی پر سادھا نشانہ

نئی دہلی: دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے دہلی حکومت کے پرنسپل سکریٹری راجندر کمار کے دفتر پر چھاپے میں ضبط کچھ دستاویزات حکومت کو واپس کرنے کے دارالحکومت کی ایک خصوصی عدالت کے حکم کے بعد آج کہا کہ وزیر اعظم کے دفتر کو اس معاملے میں قوم سے وضاحت کرنی چاہئے۔

Jan 21, 2016 12:29 AM IST | Updated on: Jan 21, 2016 12:30 AM IST
عدالت کا راجندر کمار کے دفتر پر چھاپے میں ضبط کچھ دستاویزات  کو واپس کرنے کا حکم ، کیجریوال نے مودی پر سادھا نشانہ

نئی دہلی: دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے دہلی حکومت کے پرنسپل سکریٹری راجندر کمار کے دفتر پر چھاپے میں ضبط کچھ دستاویزات حکومت کو واپس کرنے کے دارالحکومت کی ایک خصوصی عدالت کے حکم کے بعد آج کہا کہ وزیر اعظم کے دفتر کو اس معاملے میں قوم سے وضاحت کرنی چاہئے۔

مسٹر کیجریوال نے مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ ٹوئٹر پر لکھا کہ سی بی آئی کی عدالت کی طرف سے وزیر اعلی کے دفتر کو دستاویزات واپس کرنے کے آج کے فیصلے کے بعد وزیر اعظم کے دفتر کو وضاحت کرنی چاہئے کیونکہ مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی) اس کے تابع ہے ۔

عام آدمی پارٹی نے سی بی آئی کو ایک 'دکھاوٹی جانچ ایجنسی قرار دیتے ہوئے کہا کہ خصوصی عدالت کے فیصلے نے صاف کر دیا ہے کہ ملک کی اہم جانچ ایجنسی مرکز کی بھارتیہ جنتا پارٹی کی حکومت کے ہاتھوں کی کٹھ پتلی ہے۔

پارٹی نے سی بی آئی کو دہلی حکومت کے کاموں میں رکاوٹ ڈالنے کے لئے بی جے پی کا سیاسی ہتھیار بتاتے ہوئے الزام لگایا کہ مرکزی حکومت تعمیراتی کاموں کی بجائے عدالت، سی بی آئی اور ریاستی حکومت کے درمیان رسہ کشی کے کھیل میں مصروف ہے۔

Loading...

Loading...