سیاسی جماعتوں کے چندے کا حساب کتاب بھی ہوعام: کانپور میں پریورتن ریلی سے مودی کا خطاب

کانپور۔ وزیراعظم نریندر مودی نے سیاسی جماعتو ں کو ملنے والے چندے کا حساب کتاب عام کرنے پر زور دیتے ہوئے آج کہا کہ اس قدم سے ملک میں موجود بدعنوانی اور کالے دھن کے خلاف مہم کو مزید تیز کرنے میں مدد ملے گی۔

Dec 19, 2016 08:03 PM IST | Updated on: Dec 19, 2016 08:03 PM IST
سیاسی جماعتوں کے چندے کا حساب کتاب بھی ہوعام: کانپور میں پریورتن ریلی سے مودی کا خطاب

کانپور۔ وزیراعظم نریندر مودی نے سیاسی جماعتو ں کو ملنے والے چندے کا حساب کتاب عام کرنے پر زور دیتے ہوئے آج کہا کہ اس قدم سے ملک میں موجود بدعنوانی اور کالے دھن کے خلاف مہم کو مزید تیز کرنے میں مدد ملے گی۔ مسٹر مودی نے آج یہاں پریورتن ریلی کو خطاب کرتے ہوئے کہا کہ چندے کی تفصیل اجاگر کرنے کے سلسلے میں الیکشن کمیشن کی پہل کا خیر مقدم کیا جانا چاہئے ۔ بی جے پی کمیشن کے اس قدم کا خیر مقدم کرتی ہے۔ الیکشن کمیشن کے اس قدم کو عملی شکل دینے میں ان کی حکومت بھرپور مدد کرے گی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ پارلیمنٹ میں پارلیمانی میٹنگ میں انہوں نے کہا تھا کہ ملک ایمانداری کی طرف بڑھنا چاہتا ہے۔ سیاسی جماعتوں کی بھی ذمہ داری ہے کہ عوام کو اس سلسلے میں مطمئن کریں۔ پارلیمنٹ میں کھل کر بحث کریں۔ عوام کی امنگو ں کے مدنظر ایوان میں اس پر بحث کرکے راستہ نکالیں۔ انہوں نے کہا کہ صدر پرنب مکھرجی نے بھی الیکشن پربے جا خرچ کو کم کرنے کی اپیل کی تھی۔ مسٹر مکھرجی نے کہا تھا کہ لوک سبھا اور اسمبلی کے الیکشن الگ الگ ہونے سے بوجھ پڑتا ہے۔ کالے دھن کا چلن بڑھتا ہے۔ وہ بھی مسٹر مکھرجی کی طرح چاہتے ہیں کہ آئے دن ہونے والے الیکشن بند ہوں۔ ریاستی اسملبیو ں اور لوک سبھا کے الیکشن ساتھ ہوں۔ آئے دن ہونے والے الیکشن سے گاوں میں تناو بڑھتا ہے۔

مسٹر مودی نے کہا کہ ایک طرف ہم ملک کو بدعنوانی اور کالے دھن سے آزاد کرانے کی لڑائی لڑ رہے ہیں جب کہ ان کا ایجنڈا پارلیمنٹ بند کرانے کا ہے۔ پورے مہینے پارلیمنٹ نہیں چلنے دی۔ پارلیمنٹ میں بحث کیو ں نہیں ہونے دی۔ صدر کے کہنے کے باوجود پارلیمنٹ کی کارروائی کو یہ لوگ متاثر کرتے رہے۔ حکومت جس پر بحث چاہتی تھی وہ اس سے بھاگ رہے تھے کیوں کہ انہیں حساب کتاب دینا پڑ رہا تھا۔ انہوں نے کہا کہ وہ مان رہے تھے کہ پارلیمنٹ میں ہلا کرو۔ اسپیکر پر کاغذ پھینکو تاکہ کارروائی نہ چلے اور وہ حساب کتاب دینے سے بچے رہیں۔ میونسپل انتخابات میں بھی منتخب ہوکر آنے والے لوگ ایسی حرکت نہیں کرتے۔ پارلیمنٹ کے وقار کو اپنے سیاسی مفادات کی وجہ سے چوٹ پہنچانے کی کوشش کی گئی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ پارلیمنٹ میں پہلے بھی رکاوٹیں آتی تھیں لیکن تب اپوزیشن جماعتیں گھپلوں کو اجاگر کرتی تھیں۔ یہ مطالبہ کرتی تھیں کہ گھپلے باز جیل جائیں لیکن پہلی مرتبہ بے یمانوں کی مدد کے لئے لوگ آگے آئے ہیں۔حکومت بے ایمانوں کو ٹھکانے لگانے میں لگی ہے، دوسر ی طرف بے ایمانوں کو بچانے کی کوشش کی جارہی ہے۔ اس لئے بحث میں حصہ نہیں لیا۔

اس سے قبل مسٹر مودی نے کانپور میں کھلنے والے انڈین انسٹی ٹیوٹ آف اسکل کی عمارت کا سنگ بنیاد رکھا۔ اس ادارہ میں نوجوانوں کو تربیت دے کر ہنر مند بنایا جائے گا۔ وزیر اعظم بننے کے بعد مسٹر مودی کا کانپور کا یہ پہلا دورہ تھا۔ انہوں نے ریاست میں چھٹی پریورتن ریلی سے خطاب کیا۔

Loading...

Loading...