فرقہ وارانہ ہم آہنگی ، محبت ، اخوت اور بھائی چارے کو فروغ دینے کی ضرورت : شکیل صمدانی

جونپور: مسلمانوں نے ہندوستان کو مشترکہ تہذیب کا جو تحفہ دیا ہے ، اس کی مثال تاریخ میں بہت کم ملتی ہے ۔ مسلمانوں نے ہندئوں کے ساتھ مل کر ملک کو فرقہ وارانہ ہم آہنگی، محبت، اخوت اور بھائی چارے کی جو روایت قائم کی ہے ہمیں اس تہذیبی ورثے کو نہ صرف بچانے کے ضرورت ہے ، بلکہ اسے مزید فروغ دینے کی ضرور ت ہے ۔ان خیالات کا اظہار شعبہ قانون ، مسلم یونیورسٹی علی گڑھ کے مشہور پروفیسر شکیل صمدانی نے نیو اسٹیپ کلاسز کی جانب سے ایم ایم ایچ ڈی نسواں اسکول ، جونپور میں اپنے توسیعی خطبہ میں کیا۔

Jan 16, 2016 08:50 PM IST | Updated on: Jan 16, 2016 08:50 PM IST
فرقہ وارانہ ہم آہنگی ، محبت ، اخوت اور بھائی چارے کو فروغ دینے کی ضرورت : شکیل صمدانی

جونپور: مسلمانوں نے ہندوستان کو مشترکہ تہذیب کا جو تحفہ دیا ہے ، اس کی مثال تاریخ میں بہت کم ملتی ہے ۔ مسلمانوں نے ہندئوں کے ساتھ مل کر ملک کو فرقہ وارانہ ہم آہنگی، محبت، اخوت اور بھائی چارے کی جو روایت قائم کی ہے ہمیں اس تہذیبی ورثے کو نہ صرف بچانے کے ضرورت ہے ، بلکہ اسے مزید فروغ دینے کی ضرور ت ہے ۔ان خیالات کا اظہار شعبہ قانون ، مسلم یونیورسٹی علی گڑھ کے مشہور پروفیسر شکیل صمدانی نے نیو اسٹیپ کلاسز کی جانب سے ایم ایم ایچ ڈی نسواں اسکول ، جونپور میں اپنے توسیعی خطبہ میں کیا۔

انہو ں نے کہا کہ خواہ دورِسلطنت رہا ہو یا مغلیہ دور یا جنوب کی مسلم ریاستیں ان سبھی جگہوں پر عمومی طور پر ملک میں رواداری اور خوشحالی کا دور رہا ، لیکن انگریزوں کی آمد کے بعد ہندومسلم بھائی چارے میں بہت تیزی سے شگاف پڑنے لگا اور ایک پالیسی کے تحت انگریزوں نے اس کو عروج دیا۔ پروفیسر صمدانی نے کہا کہ شہنشاہ بابر نے اپنی وصیت میں گائے کے ذبیحہ پر پابندی لگانے کی بات کہی تھی، اگر راکھی کے تقدس کی بات آتی ہے تو ہمایوں کا نام سر فہرست نظر آتا ہے، اکبر کو تو پورا ملک ہی مہان کہتا ہے ، عدل جہانگیری کو کون نہیں جانتا،اورنگ زیب کی پوری زندگی انصاف پسندی کے واقعات سے بھری پڑی ہے۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ ہم ان واقعات کو نوجوان نسلوں کے سامنے سلیقہ سے پیش کریں اور ہندو مسلم رواداری کو عام کریں ۔

پروگرام کی صدارت کرتے ہوئے سینئر پولیس آفیسر ندیم صمدانی نے کہا کہ طلبہ انٹرنیٹ اور ملٹی میڈیا کا استعمال صرف تعلیمی ضرورت کے لئے کریں کیوں کہ اس کا استعمال صحت کے ساتھ ساتھ ذہن کو بھی پراگندہ کرتا ہے اور وقت کی بربادی کا سبب بنتا ہے انہوں نے کہا کہ مقابلہ جاتی امتحانات کی تیاری کرتے ہوئے فوکسڈ اسٹڈی کریں اور اپنے اندر کی چھپی ہوئی صلاحیتوں کو پہچاننے کی کوشش کریں۔ صمدانی نے کہا کہ ہندوستان ایک سیکولر ملک ہے اور یہاں سبھی فرقوں کو ترقی کے مواقع حاصل ہیں اگر ہم ان مواقع سے فائدہ نہیں اٹھاتے تو اس میں صرف ہمارا ہی قصور ہے ۔

نیو اسٹیپ کلاسز کے ڈایریکٹر خطیب الرحمن انصاری نے مہمانان کا استقبال کیا اور نظام سر نے شکریہ ادا کی۔ اس موقع پر اساتذہ کرام میں آنند کمار، عبید الرحمن،ضمیر الدین ،ابھیشک سنگھ،محمدناصر،وغیرہ موجود تھے ۔ اس پروگرام کی خصوصیت یہ رہی کہ اس میں لڑکیوں کی تعداد لڑکوں سے زیادہ رہی ۔

Loading...

Loading...