القاعدہ کے مبینہ دہشت گرد ذاکرموسیٰ کولےکرایک بار پھرپنجاب میں الرٹ جاری

پنجاب پولیس نے لوگوں کو محتاط رہنے کے لئے کہا ہے۔ ساتھ ہی پوسٹرچسپا کرکے ذاکرموسیٰ کے متعلق پولیس کو اطلاع دینے کے لئے کہا ہے۔

Nov 27, 2018 01:49 PM IST | Updated on: Nov 27, 2018 01:53 PM IST
القاعدہ کے مبینہ دہشت گرد ذاکرموسیٰ کولےکرایک بار پھرپنجاب میں الرٹ جاری

القاعدہ کا مبینہ دہشت گرد ذاکر موسیٰ: فائل فوٹو

اتوارشب کو پنجاب کے پٹھان کوٹ میں پوجا ایکسپریس سے 6 مشتبہ افراد کی گرفتاری کے بعد پنجاب میں ایک بارپھرالقاعدہ کے مبینہ دہشت گرد ذاکرموسی کولے کرالرٹ جاری کیا گیا ہے۔ پنجاب پولیس نے فیروزپورکینٹ ریلوے اسٹیشن اورآس پاس کے علاقوں میں ذاکرموسیٰ کے پوسٹرچسپا کردیئے ہیں۔

پنجاب پولیس نے لوگوں کو محتاط رہنے کے لئے کہا ہے۔ ساتھ ہی پوسٹرچسپا کرکے ذاکرموسیٰ کے متعلق پولیس کواطلاع دینے کے لئے کہا ہے۔ واضح رہے کہ دہشت گرد ذاکرموسیٰ سمیت 6 سے سات دہشت گردوں کے ہندوستان میں داخل ہونے کی اطلاع سے اترپردیش میں بھی الرٹ جاری کردیا گیا ہے۔

Loading...

میرٹھ زون کے اے ڈی جی کوآئے ایک خط میں خدشہ ظاہرکیا گیا ہے کہ دہشت گرد ذاکرموسیٰ زون کے کسی بھی ضلع میں پوشیدہ ہوسکتا ہے۔ اس لئے میرٹھ کی آئی بی، اے ٹی ایس، ایل آئی یووغیرہ خفیہ ایجنسیوں کوبھی الرٹ کردیا گیا ہے۔

اس سے قبل امرتسرنرنکاری سماگم حملے کے پیچھے القاعدہ دہشت گرد ذاکرموسیٰ کا ہاتھ ہونے کا خدشہ ظاہرکیا گیا تھا۔ خفیہ محکمہ نے امرتسرمیں گرینیڈ حملہ سے دو دن قبل ہی اس کے پنجاب میں ہونے کی اطلاع دی تھی۔ اسے دیکھتے ہوئے پنجاب پولیس نے امرتسرمیں اس کے پوسٹربھی لگوائے تھے۔ اس بات کی بھی قیاس آرائی کی جارہی تھی کہ وہ راجستھان اسمبلی انتخابات کو بھی نشانہ بناسکتا ہے۔ امرتسرمیں ہوئے اس خوفناک بم حادثہ کے بعد مانا جارہا تھا کہ اس میں ذاکرموسیٰ کا بڑا کردارہوسکتا ہے۔ حالانکہ پنجاب پولیس نے اس امکان  کو مسترد کردیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں:  دودن قبل امرتسرمیں نظرآیا تھا القاعدہ کا مبینہ دہشت گرد ذاکرموسیٰ، خفیہ ایجنسیوں نے پہلے ہی کیا تھا ہائی الرٹ

یہ بھی پڑھیں:          القاعدہ سے منسلک مبینہ دہشت گرد ذاکرموسیٰ فرار، انتخابی ریلیوں کو بناسکتا ہے نشانہ: رپورٹ

یہ بھی پڑھیں:              نائن الیون حملہ سے متعلق برطانوی خفیہ ایجنٹ کا سنسنی خیز دعویٰ

یہ بھی پڑھیں:    اسامہ بن لادین کو مارنے میں امریکہ کی مدد کرنے والے پاکستانی ڈاکٹر کی جان کو خطرہ

Loading...