پربھو کے انتظامات کے دعوؤں کی کھلی پول ، باندہ اسٹیشن پر گھنٹوں تڑپتا رہا کینسر کا مریض

باندہ : یوں تو مسافر وں کو سہولیات سے متعلق بڑے بڑے دعوے کئے جاتے ہیں اور ریلوے کے وزیر سریش پربھو مسافروں کی ہر ممکنہ سہولت کی بات کرتے ہیں۔ مگر باندہ میں ایک ایسا واقع پیش آیا ہے ، جس نے ان تمام دعووں کی پول کھول کر رکھدی ہے ۔ باندہ میں ایک کینسر کا مریض گھنٹوں اسٹیشن پر تڑپتا رہا، لیکن اس کی مدد تو درکنار کوئی بھی ریلوے ملازم ، آر پی ایف یا جی آر پی اسے دیکھنے تک نہیں آیا۔

Mar 11, 2016 11:39 AM IST | Updated on: Mar 11, 2016 11:39 AM IST
پربھو کے انتظامات کے دعوؤں کی کھلی پول ، باندہ اسٹیشن پر گھنٹوں تڑپتا رہا کینسر کا مریض

باندہ : یوں تو مسافر وں کو سہولیات سے متعلق بڑے بڑے دعوے کئے جاتے ہیں اور ریلوے کے وزیر سریش پربھو مسافروں کی ہر ممکنہ سہولت کی بات کرتے ہیں۔ مگر باندہ میں ایک ایسا واقع پیش آیا ہے ، جس نے ان تمام دعووں کی پول کھول کر رکھدی ہے ۔ باندہ میں ایک کینسر کا مریض گھنٹوں اسٹیشن پر تڑپتا رہا، لیکن اس کی مدد تو درکنار کوئی بھی ریلوے ملازم ، آر پی ایف یا جی آر پی اسے دیکھنے تک نہیں آیا۔

مریض کے لواحقین بھی مدد کی آس میں ادھر ادھر بھٹکتے رہے ، لیکن انہیں کوئی سہولت نہیں ملی۔ تاہم غنیمت رہی کہ اسٹیشن پر موجود مسافروں نے ان کی مدد کی اور یو پی حکومت کی طرف سے چلائی جا رہی 108 ایمبولینس سروس کو مطلع کیا اور اس طرح کینسر کے مریض کو اسپتال میں داخل کرایا گیا۔

مریض کے اہل خانہ کے مطابق کہ مریض کو کینسر ہے ، جس کا علاج لکھنؤ میں چل رہا ہے۔ جمعرات کو اس کو لکھنؤ لے جا رہے تھے ، تبھی راستے میں ہی مریض کی حالت بگڑ گئی اور مجبورا اس کوباندہ واپس لانا پڑا۔ راستے میں ہی ٹرین کے سفر میں مریض تڑپتا رہا۔ ٹرین میں موجود ٹی ٹی ای اور جی آر پی نے بھی ان کو نظر انداز کیا۔

ادھر ریلوے اسٹیشن پر موجود مسافروں نے ریلوے حکام اور ملازمین کے اس رویہ کو انتہائی غلط قرار دیتے ہوئے محکمہ ریل کی شدید تنقید کی ۔ ان کا کہنا ہے کہ حکومت نے ریل بجٹ میں وعدے تو بہت بڑے بڑے کئے ہیں ، مگر وہ سب کھوکھلے ثابت ہو رہے ہیں۔

Loading...

Loading...