مہیلا تھانے کی ہیڈ کانسٹینل کے ساتھ 2 بھائیوں نے کیا ریپ ، 4 سال سے بنایا ہوا تھا حوس کا شکار

چاقو کی نوک پر دو بھائیوں نے ہیڈ کانسٹیبل خاتون پولیس کے ساتھ ریپ اور اس کے بعد متاثرہ کے ساتھ مارپیٹ کر کے جان سے مارنے کی دھمکی دی۔ متاثرہ کو اہم ملزم گزرے چار سال سے اپنی حوس کا شکار بناتا آ رہا تھا۔

Sep 08, 2018 07:47 PM IST | Updated on: Sep 08, 2018 07:53 PM IST
مہیلا تھانے کی ہیڈ کانسٹینل کے ساتھ 2 بھائیوں نے کیا ریپ ، 4 سال سے بنایا ہوا تھا حوس کا شکار

متاثرہ خاتون پولیس کو میڈٰکل کیلئے پلول کے شہری اسپتال میں لایا گیا۔

ہریانہ میں پلول کے مہیلا تھانےمیں  ہیڈ کانسٹیبل کے عہدے پر فائز خاتون پولیس کے ساتھ ریپ کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ الزام ہے کہ چاقو کی نوک پر دو بھائیوں نے ہیڈ کانسٹیبل خاتون پولیس کے ساتھ ریپ اور اس کے بعد متاثرہ کے ساتھ مارپیٹ کر کے جان سے مارنے کی دھمکی دی۔ متاثرہ کو اہم ملزم گزرے چار سال سے اپنی حوس کا شکار بناتا آ رہا تھا۔ خاتون تھانہ پولیس نے متاثرہ کی شکایت پر ایک خاتون سمیت پانچ نامزد ملزمان کے خلاف معاملہ درج کر لیا ہے۔ لیکن کسی بھی ملزم کی گرفتاری نہیں ہو پائی ہے۔

سوال یہ اٹھتا ہے کہ خواتین کے تحفظ کو لیکر ریاست کے ہر ضلع میں خواتین تھانے کھولنے والی حکومت اپنے تھانوں میں کام  کرنے والی خواتین پولیس کو ہی حوس کے بھیڑیوں سے نہیں بچا پارہی ہے۔ ایدا ہی ایک تازہ معاملہ پلول کے خواتین تھانہ میں سامنے آیا ہے۔ جہاں ایک خاتون پولیس کے ساتھ چاقو کی نوک پر پہلے تو دو بھائیوں نے الگ الگ عصمت دری کی اور اس کے بعد معاملے کو دبانے کیلئے ملزموں کے رشتہ داروں  نے متاثرہ کے ساتھ مارپیٹ کر کے اسے جان سے مارنے کی دھمکی بھی دی۔

Loading...

بتادیں کہ جان سے مارنے کی دھمکی سے متاثرہ خاتون پولیس حوس کے بھیڑیوں کے گناہوں کو گزرے چار سال سے سہتی آ رہی تھی۔

خاتون تھانہ انچارچ کملا دیوی  کے ،مطابق ان کے تھانے میں ہیڈ کانسٹیبل کے عہدے پر کام  کر رہی 32 سالہ خاتون پولیس نے شکایت درج کرائی ہے کہ 2014 میں اس کی ڈیوٹی مہیندر گڑھ ضلع کے نارنول میںتھی۔ بس میں آتے جاتے وقت اس کی جان پہچان پلول کے گاؤں الاولپور کے مقامی جوگیندر عرف منٹو سے ہو گئی۔ متاثڑہ کا الزام ہے کہ 15 جون 2014 کو جوگیندر نے اس کے ساتھ ریپ کیا اور کسی کو بتانے پر جان سے مارنے و سماج میں بدنام کرنے کی دھمکی دی۔

اس کے کچھ سال بعد خاتون پولیس کا تبادلہ پلول کے مہیلا تھانے میں ہو گیا اور وہ پلول کی ایک کالونی میں کرائے پر رہنے لگی۔ یہاں پر بھی ملزم اسے اپنی حوس کا شکار بناتا رہا۔ ایک دن ملزم کے بھائی توش راج نے بھی چاقو کی نوک پر اسے اپنی حوس کا شکار بنایا۔ متاثرہ نے جب مخالفت کرنی چاہی تو ملزم اور اس کی بہن پریتی ، جیجا پپو اور ایک ساتھی نریندر نے جب اس کے ساتھ مار پیٹ کی ار جان سے مارنے کی دھمکی دی۔

ملزموں کے گناہوں سے تنگ آکر آخر کار متاثرہ نے معاملے کی شکایت پولیس کو دی۔ پولیس نے متاثرہ کی شکایت کی بنیاد پر اس کامیڈیکل کارایا اور ریپ کی تصدیق ہونے کے بعد ملزموں کے خلاف مختلف دفعات کے تحت معاملہ درج کرکے کارروائی شروع کر دی ہے۔ ابھی تک پولیس کسی بھی ملزم کو گرفتار نہیں کر پائی ہے۔

Loading...