محبوبہ مفتی کی کابینہ میں 8 نئے چہرے شامل، کویندر گپتا نے نائب وزیر اعلیٰ کا لیا حلف

جموں۔ جموں و کشمیر کی کابینہ میں پیر کو ایک بڑا ردوبدل ہوا۔ محبوبہ کابینہ میں 8 نئے چہرے شامل ہوئے۔

Apr 30, 2018 09:49 AM IST | Updated on: Apr 30, 2018 01:25 PM IST
محبوبہ مفتی کی کابینہ میں 8 نئے چہرے شامل، کویندر گپتا نے نائب وزیر اعلیٰ کا لیا حلف

کویندر گپتا پچھلے تین برسوں سے جموں و کشمیر اسمبلی کے اسپیکر رہے ہیں۔

جموں۔ جموں و کشمیر کی کابینہ میں پیر کو ایک بڑا ردوبدل ہوا۔ محبوبہ کابینہ میں 8 نئے چہرے شامل ہوئے۔ وہیں، اسمبلی کے اسپیکر کو نرمل سنگھ کی جگہ نیا نائب وزیر اعلیٰ بنایا گیا ہے۔  دوپہر 12 بجے کنونشن سینٹر میں کابینہ میں شامل ہوئے نئے وزرا اور نئے نائب وزیر اعلیٰ نے عہدہ اور رازداری کا حلف لیا۔

کویندر گپتا جموں کے مئیر رہ چکے ہیں۔  گزشتہ تین سالوں سے وہ جموں و کشمیر قانون ساز اسمبلی کے اسپیکر ہیں۔ 2014 ء کے اسمبلی انتخابات میں انہوں نے گاندھی نگر اسمبلی نشست سے الیکشن جیتا تھا اور وہ پہلی بار ایم ایل اے بنے تھے۔

Loading...

صرف 13 سال کی عمر میں کویندر گپتا آر ایس ایس کے ساتھ  وابستہ ہو گئے تھے۔ ایمرجنسی کے دوران انہیں 13 ماہ کے لئے جیل جانا پڑا۔ گروداس پور جیل میں 13 ماہ  رہنے کے بعد وہ باہر آئے۔ 1978-1979 کے درمیان وشو ہندو پریشد کے صدر بھی رہے۔  1993-1958 کے بیچ انہوں نے بھارتیہ جنتا یووا مورچہ کے صدر کا عہدہ سنبھالا۔

جموں و کشمیر کے نئے نائب وزیر اعلی کویندر گپتا نے نیوز ایجنسی 'اے این آئی' سے بات چیت میں بتایا کہ میں کٹھوعہ کے راسنا میں متاثرہ خاندان کو انصاف دلانے کی کوشش کروں گا۔ وہیں، محبوبہ حکومت کی طرف سے انہیں جو ذمہ داری سونپی گئی ہے اسے وہ پوری ایمانداری سے نبھائیں گے۔

یہ ہیں محبوبہ کابینہ کے نئے وزرا

کویندر گپتا ( نائب وزیر اعلیٰ)۔

محمد خلیل بیگ

ست پال شرما

محمد اشرف میر

سنیل کمار شرما

راجیو جسروٹیا

دیویندر کمار منیال

شکتی راج

بتا دیں کہ جموں و کشمیر کی حکومت میں ساجھیدار بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) نے 17 اپریل کو اپنے تمام وزراء سے استعفی دینے کے لئے کہا تھا۔ بی جے پی کے اس قدم کے پیچھے کابینہ میں نئے چہروں کو جگہ دینے کا سبب بتایا گیا تھا۔

دراصل کٹھوعہ میں 8 سالہ معصوم بچی کے ساتھ اجتماعی عصمت دری اور قتل کے معاملے کو لے کر ریاست میں حکومت کی شراکت دار دونوں پارٹیوں کے د رمیان رشتے تلخ ہوگئے تھے، جس کے بعد یہ قدم سامنے آیا تھا۔ اس سے قبل کٹھوعہ میں ملزمین کی حمایت میں ریلی نکالنے والے دو وزرا کو محبوبہ مفتی کے دباو کے سبب استعفیٰ دینا پڑا تھا۔

 

Loading...