پانچ سو اور ایک ہزار کے نوٹ بند ہونے سے شادی والے گھروں کی مشکلات بڑھیں

کالی کمائی کو باہر نکالنے کے لئے پانچ سو اور ہزار کے نوٹ بند کئے جانے کا یوں تو ہر طبقہ خیرمقدم کررہا ہے ، مگر ایسے لوگوں کی پریشانیاں کافی زیادہ بڑھ گئی ہیں

Nov 10, 2016 11:08 PM IST | Updated on: Nov 10, 2016 11:08 PM IST
پانچ سو اور ایک ہزار کے نوٹ بند ہونے سے شادی والے گھروں کی مشکلات بڑھیں

بھٹکل / میرٹھ : کالی کمائی کو باہر نکالنے کے لئے پانچ سو اور ہزار کے نوٹ بند کئے جانے کا یوں تو ہر طبقہ خیرمقدم کررہا ہے ، مگر ایسے لوگوں کی پریشانیاں کافی زیادہ بڑھ گئی ہیں ، جن کے گھر میں شادی یا دیگر جشن کا ماحول تھا ۔تقریبا ملک بھر میں اس طرح کی صورتحال ہے ، کیونکہ پرانے نوٹ محض کاغذ کے ٹکرے ہوجانے اور ضرورت کے مطابق نئے نوٹ نہیں ملنے کی وجہ سے ان کی خریداری سے لے ہر طرح کی تیاریاں متاثر ہوگئی ہیں۔

بھٹکل میں ای ٹی وی نے ایسے لوگوں سے بات کی ، جو اپنی بیٹیوں کی شادی کی تیاری میں تھے اور اس کے لئے انہوں نے اپنے گھروں کو خوبصورتی سے سجا رہے تھے اور تیاریوں میں مصروف تھے، لیکن اچانک ان پر مودی حکومت کی جانب سےنوٹ ہٹائے جانے کی گاج گرنے سے وہ بے حد پریشان ہوگئے ہیں ۔

شہر میں شادیوں کا موسم ہے اور متعدد گھروں میں دو تین دن کے بعد ہی بارات آنےو الی ہے ، مگر لڑکی کے باپ اور اہل کانہ پانچ سو اور ہزار کے نوٹ کے نہ چلنے کی وجہ سے شادی کی تیاریوں میں دشواریوںکی شکایت کر رہے ہیں ۔ ان کا کہنا ہے کہ فیصلہ اگر درست بھی ہے ، تو کم از اس موقع پر سرکار کو یہ فیصلہ نہیں لینا چاہیے ۔

دوسری جانب شادیوں میں سب سے زیادہ اپنے آپ کو تیار کرنے والی خواتین بھی اس فیصلہ سے ناراض ہیں ۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ اس مرتبہ کئی طرح کی مشکلات میں گھری ہوئی ہیں ۔ زیورات اور کپڑوں کی دکانیں ان کا انتظار کر رہی ہیں ، مگر پرانے نوٹوں کو رد کئے جانے کے فیصلہ سے ان خواتین میں ناراضگی پائی جا رہی ہے ، کیوں کہ وہ خریداری نہیں کر پا رہی ہیں۔

Loading...

کچھ ایسا ہی حال میرٹھ کا بھی ہے، جہاں صبا کی کل برات آنے والی ہے اور شادی کی تیاریوں کو لے کر ان کے والد نے خرچ کے انتظام کے لئے بینک سے بڑی رقم نقد کے طور پر نکال رکھی تھی ۔ لیکن پانچ سو اور ہزار کے نوٹ اب رد ہوجانے کی وجہ سے ان کے سامنے نئی پریشانیاں پیدا ہو گئی ہیں ۔ دلہن کے والد جہاں اب انتظامات کو لے کر پریشان ہیں ، وہیں اپنے والدین کی پریشانی دیکھ کر دلہن نے اس مسئلہ کے حل کے لئے حکومت سے اپپل کی ہے۔

Loading...