سڑک پر بھیک مانگنے سے بہتر ہے بار میں رقص کرنا : سپریم کورٹ

نئی دہلی : ڈانس بار پر روک لگانے کی مہاراشٹرا حکومت کی ضد پر سخت تنقید کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے پیر کو کہا کہ روزی روٹی کمانے کے لئے سڑکوں پر بھیک مانگنے اور ناقابل قبول جگہوں پر جانے سے کہیں بہتر ہے بار میں رقص کرنا۔

Apr 25, 2016 11:12 PM IST | Updated on: Apr 25, 2016 11:12 PM IST
سڑک پر بھیک مانگنے سے بہتر ہے بار میں رقص کرنا : سپریم کورٹ

نئی دہلی : ڈانس بار پر روک لگانے کی مہاراشٹرا حکومت کی ضد پر سخت تنقید کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے پیر کو کہا کہ روزی روٹی کمانے کے لئے سڑکوں پر بھیک مانگنے اور ناقابل قبول جگہوں پر جانے سے کہیں بہتر ہے بار میں رقص کرنا۔ جسٹس دیپک مشرا اور جسٹس شوكيرت سنگھ کی بینچ نے کہا کہ فحاشی روکنے کے لئے رقص کے پیشہ کو نشانہ نہیں بنانا چاہئے۔

بینچ نے کہا کہ ایک ریاست کے طور پر آپ کو خواتین کے وقار کی حفاظت کرنی ہے۔ لیکن آپ یہ نہیں کہہ سکتے کہ اگر کوئی خاتون کام کی جگہ پر جاتی ہے اور وہاں فحاشی ہے ، تو وہ جگہ ہی بند ہو جانی چاہئے۔عدالت نے کہا کہ خواتین کے وقار کی حفاظت یقینی ہونی چاہئے۔ کسی قسم کی فحاشی نہیں ہونی چاہئے۔ آپ اس کے ریگولیٹری بن سکتے ہیں۔ لیکن آپ یہ نہیں کہہ سکتے کہ ڈانس بار پر پابندی لگا دی جائے۔

عدالت نے اس پر زور دیا کہ ڈانس بار کو اجازت دینے اور فحاشی کو روکنے کے درمیان توازن ہونا چاہئے۔ بینچ نے کہا کہ ڈانس بار قاعدے قانون سے چلانے کا مطلب اس پر روک لگانا نہیں ہے۔ عدالت نے کہا کہ مکمل ذہنیت ہی روک لگانے والی ہے۔ بینچ نے کہا کہ جب عدالت کہتی ہے کہ ڈانس بار پر روک نہیں ہونی چاہئے تو وہ (مہاراشٹر حکومت) اسے ریگولیشن کے نام پر روک رہے ہیں۔ آپ ڈانس بار کی اجازت دے رہے ہیں، لیکن قوانین سے پابندیاں تھوپ رہے ہیں۔

عدالت نے یہ باتیں انڈین ہوٹل اینڈ ریستوران ایسوسی ایشن کی عرضی پر سماعت کے دوران کہیں۔ اس میں کہا گیا ہے کہ مہاراشٹر حکومت نے ڈانس بار کے قوانین کو اتنا مشکل بنا دیا ہے کہ اسے پورا کرتے ہوئے ڈانس بار چلانا ناممکن ہے۔ مثال کے طور پر اس میں ایک قانون یہ بھی ہے کہ کسی مذہبی مقام کے ایک کلو میٹر کے دائرے میں کوئی ڈانس بار نہیں ہونا چاہئے۔

Loading...

ایسوسی ایشن کی جانب سے سینئر وکیل جینت بھوشن نے کہا کہ ممبئی میں یہ سوچنا ناممکن ہے کہ ڈانس بار کسی مذہبی مقام کے ایک کلو میٹر کے دائرے میں نہ ہو۔ عدالت نے ریاستی حکومت سے کہا کہ جس طرح اس سے پہلے کے حکم پر عمل کرتے ہوئے مہاراشٹر حکومت نے ڈانس باروں کو لائسنس جاری کیا ہے، اسی طرح محکمہ داخلہ کو سرعت سے ڈانس بار میں کام کرنے والے لوگوں کی تصدیق کرنی چاہئے۔

Loading...