شیعہ وقف بورڈ چیئر مین وسیم رضوی کی نئی سیاسی پارٹی پر شیعہ برادری کا شدید رد عمل کا اظہار

شیعہ وقف بورڈ کے چیئر مین وسیم رضوی کی طرف سے نئی سیاسی پارٹی کا اعلان کئے جانے اور اکھاڑہ پریشد کو پارٹی کا سر پرست مقرر کرنے پر شیعہ برادری کی طرف سے سخت رد عمل کا اظہار کیا گیا ہے ۔

May 28, 2018 09:51 PM IST | Updated on: May 28, 2018 09:51 PM IST
شیعہ وقف بورڈ چیئر مین وسیم رضوی کی نئی سیاسی پارٹی پر شیعہ برادری کا شدید رد عمل کا اظہار

شیعہ وقف بورڈ کے چئیرمین وسیم رضوی : فائل فوٹو۔

الہ آباد : شیعہ وقف بورڈ کے چیئر مین وسیم رضوی کی طرف سے نئی سیاسی پارٹی کا اعلان کئے جانے اور اکھاڑہ پریشد کو پارٹی کا سر پرست مقرر کرنے پر شیعہ برادری کی طرف سے سخت رد عمل کا اظہار کیا گیا ہے ۔گزشتہ 24 مئی کو وسیم رضوی نے اکھاڑہ پریشد میں اپنی سیاسی پارٹی ’’انڈین شیعہ عوامی لیگ ‘‘ کا اعلان کیا تھا ۔اس موقع پر اکھاڑہ پریشد نے بھی شیعہ عوامی لیگ کو ہر ممکن مدد دینے کا وعدہ کیا تھا ۔

سیم رضوی کے اس اقدام سے شیعہ فرقے میں سخت ناراضگی ہے ۔شیعہ تنظیموں کا کہنا ہے کہ وسیم رضوی کو شیعہ برادری بہت پہلے ہی مسترد کر چکی ہے ۔شیعہ دانشوروں کا کہنا ہے کہ اکھا ڑا پریشد مسلمانوں میں مسلکی انتشار کو ہوا دے کر سیاسی فائدہ حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہے ۔ ان کا کہنا ہے کہ وسیم رضوی کی اس طرح کی کوششو ں کا کوئی بھی اثر شیعہ برادری یا مسلم سماج پر نہیں پڑے گا ۔

خیال رہے کہ گزشتہ 24 مئی کو شیعہ وقف بورڈ کے چیئر مین وسیم رضوی نے اپنی نئی سیاسی پارٹی’’ انڈین شیعہ عوامی لیگ ‘‘ کا اعلان اکھا ڑہ پریشد میں کیا تھا ۔ وسیم رضوی نےاکھاڑا پریشد کے صدر مہنت نریندر گری کو نئی پارٹی کا سر پرست بھی مقرر کیا تھا۔وسیم رضوی نے اپنی سیاسی پارٹی کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ پارٹی شیعہ اور ہندو ایکتا کے نعرے کے تحت کام کرے گی ۔

مشتاق عامر کی رپورٹ

Loading...

Loading...