بی سی سی آئی کوئی پرائیویٹ ادارہ نہیں ، یہ ذمہ دار اور جوابدہ ہے : سپریم کورٹ

نئی دہلی : سپریم کورٹ نے ہندوستانی کرکٹ کنٹرول بورڈ بی سی سی آئی سے کہا کہ بورڈ پرائیویٹ ادارہ نہیں ہے اور ایک مشہور کھیل کی ٹرسٹی ہونے کے ناطے اسے اپنا کام شفاف طریقے سے انجام دینے چاہئے ۔

Apr 12, 2016 12:33 AM IST | Updated on: Apr 12, 2016 12:33 AM IST
بی سی سی آئی کوئی پرائیویٹ ادارہ نہیں ، یہ ذمہ دار اور جوابدہ ہے : سپریم کورٹ

نئی دہلی : سپریم کورٹ نے ہندوستانی کرکٹ کنٹرول بورڈ بی سی سی آئی  سے کہا کہ بورڈ پرائیویٹ ادارہ نہیں ہے اور ایک مشہور کھیل کی ٹرسٹی ہونے کے ناطے اسے اپنا کام شفاف طریقے سے انجام دینے چاہئے ۔ ساتھ ہی ساتھ  دیگرعوامی اداروں کی طرح  ذمہ دار بھی ہونا چاہئے ۔ سپریم کورٹ کے چیف جسٹس ٹی ایس ٹھاکر اور جسٹس فقیر محمد ابراہیم کی بینچ نے بی سی سی آئی سے کہا کہ آپ کو کوئی پرائیویٹ ادارہ نہیں ہے ۔ آپ ذمہ دار اور جوابدہ ہیں ۔ آپ سے امید کی جاتی ہے کہ آپ عوامی اداروں کی طرح کام کریں ۔ آپ کھیل کے ٹرسٹی ہیں ۔

عدالت نے کہا کہ آپ اس طرح کا برتاؤ کر رہے ہیں کہ ہم بورڈ میں کسی بھی قسم کی تبدیلی نہیں ہونے دیں گے جب تک تمام لوگ ساتھ نہیں آ جاتے اور تبدیلی کے لئے تیار نہیں ہو جاتے ۔ سپریم کورٹ نے بورڈ سے پوچھا کہ آپ کو بورڈ کے کام میں شفافیت، احتساب اورغیرجانبداری لانے جیسے ممکنہ اہداف کی مخالفت کیسے کر سکتے ہیں؟

Loading...

سپریم کورٹ نے یہ بات بی سی سی آئی کے بانی ارکان میں سے ایک کرکٹ کلب آف انڈیا (سی سی آئی) کی طرف سے جسٹس لوڑھا کمیٹی کی رپورٹ میں ایک ریاست ایک ووٹ کی سفارش کی مخالفت کرنے کی وجہ سے کہی۔

بی سی سی آئی اور اس کی اتحادی تنظیم لوڑھا کمیٹی کی ایک ریاست ایک ووٹ، بورڈ میں سی اے جی کی نمائندگی ، حکام کی مدت دو بار تک محدود کرنے اور حکام کی عمر کی حد 65 سال مقرر کرنے کی سفارشات کے خلاف ہے ۔ عدالت میں اسی پر سماعت چل رہی ہے ۔

Loading...