مسلم خواتین کا چست برقع یا لباس پہننا غیراسلامی اور ناجائز : دارالعلوم دیوبند

اسلامی تعلیم کے مرکز دار العلوم دیوبند نے مسلم خواتین کے لئے چست برقع اور چمکیلے لباس کوغیراسلامی اورناجائز قرار دیا ہے۔

Jan 03, 2018 11:55 PM IST | Updated on: Jan 03, 2018 11:55 PM IST
مسلم خواتین کا چست برقع یا لباس پہننا غیراسلامی اور ناجائز : دارالعلوم دیوبند

میرٹھ : اسلامی تعلیم کے مرکز دار العلوم دیوبند نے مسلم خواتین کے لئے چست برقع اور چمکیلے لباس کوغیراسلامی اورناجائز قرار دیا ہے۔ ایک شخص کے ذریعہ پوچھے گئے سوال کے جواب میں دارالافتا کی جانب سے اس تعلق سے فتویٰ جاری کیا گیا ۔مسلم خواتین کا چمکیلے اورچست برقع یا لباس پہننے سے متعلق پوچھے گئے سوال کے جواب میں دارالعلوم دیوبند کے دارالافتا نے اس عمل کو غیر اسلامی اور ناجائز قرار دیا ہے ۔

تاہم اس سلسلہ میں اب تک دار العلوم کی جانب سے پریس کو کوئی بیان جاری نہیں کیا گیا ۔تاہم اس فتویٰ کی دیگر علماء دیوبند نے تائید کی ہے۔ وہیں اس فتویٰ کو جس نے بھی حاصل کیا، اس نے سوشل میڈیا پر لوڈ کر دیا، جس کے بعد اس پر زوردار بحث شروع ہو گئی اور آر ایس ایس اور دیگر مسلم مخالف تنظیموں نے اس کو عورت کی آزادی پر حملہ بتاتے ہوئے فتویٰ جاری کرنے والوں کے خلاف پابندی اور کارروائی تک کا مطالبہ کر ڈالا۔

تاہم فتویٰ کی بابت علما کا کہنا ہے کہ یہ صحیح ہے اور اس کو ماننا اور نہ ماننا سامنے والے کی مرضی پرہے۔ فتویٰ کوئی حکم نہیں صرف پوچھے گئے سوال کا اسلام اور شریعت کی روشنی میں ایک جواب ہے ۔

Loading...

unnamed (1)unnamed

Loading...