چار برس گزرجانے کے بعد بھی یو پی مدرسہ بورڈ میں نافذ نہیں کیا گیا جدید تعلیمی نصاب

آپ کو یہ جان کو حیرت ہوگی کہ یو پی مدرسہ بورڈ کے تمام امتحانات کسی تعلیمی نصاب کے بغیر کرائے جا رہے ہیں۔ نئے تعلیمی نصاب کا نفاذ 2012 میں ہی ہونا تھا ، لیکن مدرسہ بورڈ نے اپنے مدارس میں ابھی تک نیا تعلیمی نصاب نافذ نہیں کیا ہے ۔

Oct 07, 2016 07:39 PM IST | Updated on: Oct 07, 2016 07:39 PM IST
چار برس گزرجانے کے بعد بھی یو پی مدرسہ بورڈ میں نافذ نہیں کیا گیا جدید تعلیمی نصاب

الہ آباد : آپ کو یہ جان کو حیرت ہوگی کہ یو پی مدرسہ بورڈ کے تمام امتحانات کسی تعلیمی نصاب کے بغیر کرائے جا رہے ہیں۔ نئے تعلیمی نصاب کا نفاذ 2012 میں ہی ہونا تھا ، لیکن مدرسہ بورڈ نے اپنے مدارس میں ابھی تک نیا تعلیمی نصاب نافذ نہیں کیا ہے ۔ اس وقت مدرسہ بورڈ سے منظور شدہ ایسا کوئی تعلیمی نصاب نہیں ہے ، جس کی بنیاد کو امتحانات کرائے جا سکیں۔

یو پی مدرسہ بورڈ کے لئے نئے تعلیمی نصاب تیار کرنے کی ذمہ داری ریاستی حکومت نے جامعہ ہمدرد کو دی تھی ۔ جامعہ ہمدرد نے نصاب کمیٹی تشکیل کی ، جس نے 2012 میں اپنی رپورٹ یو پی مدرسہ بورڈ کو سو نپ دی۔ نئے تعلیمی نصاب میں مو لوی، منشی، عالم، کامل اور فاضل کی تعلیم میں بنیادی ترامیم پیش کی گئی تھیں ، لیکن چار سال گزرجانے کے بعد بھی ابھی تک یو پی مدرسہ بورڈ نے نیا نصاب نافذ نہیں کیا ہے ۔

قابل ذکر بات یہ ہے کہ نئے تعلیمی نصاب کو نافذ کرنے کے لئے الہ آباد ہائی کورٹ میں ایک عرضی بھی داخل کی گئی تھی، جس پر عدالت نے بورڈ کو نیا نصاب نافذ کرنے کا حکم بھی دیا تھا ۔لیکن مدرسہ بورڈ نے مدارس میں جدید نصاب نافذ کرنے کے لئے ابھی تک کوئی عملی قدم نہیں اٹھا یا ہے ۔ نئے نصاب کو ابھی تک نافذ نہ کئے جانے سے مدارس میں تعلیم کا سخت نقصان ہو رہا ہے۔

مدارس سے وابستہ افراد کا کہنا ہے کہ کسی تعلیمی نصاب کے بغیر مدرسہ بورڈ ہر سال امتحانات کرا دیتا ہے ۔ امتحانات کے پرچے پرانے نصاب کے مطا بق ہی تیار کئے جاتے ہیں ، جبکہ ضابطہ کے مطابق مدرسہ بورڈ کو اپنے تمام امتحانات نئے تعلیمی نصاب کے مطابق کرانے چاہئے ۔

Loading...

Loading...