آبروریزی کے بعد حاملہ ہوئی 16 سال کی طالبہ ، ملزم مسلسل دے رہا ہے اسقاط حمل کرانے کی دھمکی

اترپردیش میں خواتین کے تحفظ کو لے کر پولیس کتنی حساس ہے ، اس کا اندازہ اسی بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ نابالغ ریپ متاثرہ اپنے گھر سے نہیں نکل پارہی ہے۔

Dec 23, 2018 04:19 PM IST | Updated on: Dec 23, 2018 04:19 PM IST
آبروریزی کے بعد حاملہ ہوئی 16 سال کی طالبہ ، ملزم مسلسل دے رہا ہے اسقاط حمل کرانے کی دھمکی

علامتی تصویر

اترپردیش میں خواتین کے تحفظ کو لے کر پولیس کتنی حساس ہے ، اس کا اندازہ اسی بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ نابالغ ریپ متاثرہ اپنے گھر سے نہیں نکل پارہی ہے۔ یہ معاملہ فرخ آباد جنپد کے تھانہ شمس آباد کا ہے ، جہاں 16 سال کی لڑکی سے ریپ اور اسقاط حمل کرانے کی دھمکی دینے والے ملزم کو پولیس ابھی تک گرفتار نہیں کرسکی ہے۔ متاثرہ کے اہل خانہ نے ڈی ایم سے انصاف کی فریاد کی ہے۔

متاثرہ کے اہل خانہ کے مطابق پڑوس میں رہنے والے افسر اور اظہار نے ان کی نابالغ بیٹی کی آبروریزی کی تھی ۔ آبروریزی کے بعد ان کی بیٹی حاملہ ہوگئی ۔ اس کے بعد معاملہ شمس آباد تھانہ میں درج کرایا گیا تھا ۔ پولیس نے افسر کو گرفتار کرکے جیل بھیج دیا تھا ، لیکن اظہار اب تک فرار چل رہا ہے۔الزام ہے کہ اب اظہار اپنے بھائیوں کے ساتھ مل کر متاثرہ اور اس کے اہل خانہ کو دھمکی دے رہا ہے ۔ متاثرہ کے اہل خانہ کا کہنا ہے کہ ملزم اظہار مسلسل ان کی نابالغ بیٹی کا اسقاط حمل کرانے اور معاملہ واپس لینے کی دھمکی دے رہا ہے۔

انہوں نے جب اس کی شکایت شمس آباد تھانہ میں کی تو پولیس اہلکار کوئی سماعت نہیں کررہے ہیں ۔ متاثرہ طالبہ کی ماں نے بتایا کہ پولیس کے ذریعہ ملزم کے خلاف کوئی کارروائی نہ ہونے کی وجہ سے ہی ڈی ایم سے شکایت کرنے پہنچے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ اگلے ماہ تک بیٹی کی ڈیلیوری ہونے کا بھی امکان ہے۔ ایسے میں پورا اہل خانہ دہشت میں ہے۔

Loading...

Loading...