உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Asia Cup 2022: وراٹ کوہلی نہیں، ہندوستانی اوپنرز ہیں پاکستان کے خلاف کمزور کڑی، یہ دو گیندیں پڑتی ہیں بھاری

    Asia Cup 2022: وراٹ کوہلی نہیں، ہندوستانی اوپنرز ہیں پاکستان کے خلاف کمزور کڑی، یہ دو گیندیں پڑتی ہیں بھاری ۔  (AP)

    Asia Cup 2022: وراٹ کوہلی نہیں، ہندوستانی اوپنرز ہیں پاکستان کے خلاف کمزور کڑی، یہ دو گیندیں پڑتی ہیں بھاری ۔ (AP)

    India vs Pakistan, Asia Cup 2022: چار سال بعد ایک بار پھر ایشیا کپ میں ہندوستان اور پاکستان کی ٹیمیں کافی کم وقفہ کے دوران دوسری مرتبہ آمنے سامنے ہوں گی۔ 2018 میں دونوں میچ ہندوستان نے جیتے تھے۔ اس مرتبہ بھی روہت شرما کی قیادت میں ہندوستانی ٹیم نے جیت کے ساتھ آغاز کیا ہے، لیکن پاکستان جوابی کارروائی کرنے کی طاقت رکھتا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | Mumbai | Chennai | Kolkata
    • Share this:
      نئی دہلی : چار سال بعد ایک بار پھر ایشیا کپ میں ہندوستان اور پاکستان کی ٹیمیں کافی کم وقفہ کے دوران دوسری مرتبہ آمنے سامنے ہوں گی۔ 2018 میں دونوں میچ ہندوستان نے جیتے تھے۔ اس مرتبہ بھی روہت شرما کی قیادت میں ہندوستانی ٹیم نے جیت کے ساتھ آغاز کیا ہے، لیکن پاکستان جوابی کارروائی کرنے کی طاقت رکھتا ہے۔ اس نے ہانگ کانگ کے خلاف سب سے بڑی جیت درج کر کے یہ دکھا بھی دیا ہے۔ ایسے میں اتوار کو دبئی میں دونوں ٹیموں کے درمیان ہونے والے میچ میں کسی ایک ٹیم کو جیت کا دعویدار کہنا کافی مشکل ہے۔ آخری میچ میں بھی 147 رنز بنانے کے باوجود پاکستان نے ہندوستان کو آسانی سے جیتنے نہیں دیا تھا ۔ میچ کا نتیجہ آخری اوور میں سامنے آیا تھا ۔ دونوں ٹیمیں انجری اور کھلاڑیوں کی بیماریوں سے پریشان ہیں۔ ایسے میں جو ٹیم دباؤ کو بہتر طریقہ سے ہینڈل کرسکے گی، جیت اس کی جھولی میں آئے گی۔

      ایشیا کپ سے پہلے ہندوستانی ٹیم کے سابق کپتان وراٹ کوہلی کی فارم پر سب سے زیادہ سوالات اٹھ رہے تھے۔ ٹیم میں ان کی جگہ کو لے کر باتیں ہو رہی تھیں، لیکن وراٹ کوہلی کی فارم کو لے کر جتنی تشویش ہے، کپتان روہت شرما کی بلے بازی نے بھی پریشانی بڑھا دی ہے۔ حالانکہ ہندوستان ان کی کپتانی میں مسلسل میچ جیت رہا ہے۔ لیکن ان کے بلے سے رنز نہیں آرہے ہیں۔ پاکستان کے خلاف ٹی ٹوینٹی میں ان کی کارکردگی مزید کمزور ہے۔ ایسے میں پاکستان کے خلاف ہندوستان کی اصل کمزور کڑی کوہلی نہیں بلکہ روہت شرما ہیں ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: ہندوستان اور پاکستان کے درمیان سپر4 میں مقابلہ آج، جانئے کون کس پر بھاری؟


      روہت شرما نے پاکستان کے خلاف اب تک 9 ٹی 20 کھیلے ہیں۔ اس میں انہوں نے صرف 13.66 کی اوسط سے 82 رنز بنائے ہیں۔ ان کا بیسٹ اسکور 30* رنز رہا ہے، جو ان کے کیریئر اوسط اور اسٹرائیک ریٹ سے کافی کم ہے۔ روہت کا ٹی 20 میں کیریئر اوسط 32 ہے، جبکہ انہوں نے 140 کے اسٹرائیک ریٹ سے 3520 رنز بنائے ہیں۔ ساتھ ہی پاکستان کے خلاف ان کا اسٹرائیک ریٹ 112 ہے۔ اس کی بڑی وجہ ان کا جلد آوٹ ہونا ہے۔ روہت نے پاکستان کے خلاف 8 ٹی 20 اننگز کھیلی ہیں، ان میں سے 3 میں وہ صرف 2 گیندوں کے اندر آؤٹ ہو چکے ہیں ۔

      گزشتہ سال ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ میں روہت شرما ، شاہین شاہ آفریدی کی پہلی ہی گیند پر آؤٹ ہو گئے تھے۔ اس سے پہلے 2016 کے ایشیا کپ میں پاکستان کے خلاف صرف 84 رنز کا تعاقب کرتے ہوئے روہت 2 گیندوں کے اندر ہی آؤٹ ہو گئے تھے۔ اس وقت محمد عامر نے انہیں اپنا شکار بنایا تھا۔ وہ کھاتہ بھی نہیں کھول سکے تھے۔ دونوں موقعوں پر بائیں ہاتھ کے تیز گیند بازوں نے انہیں پویلین کی راہ دکھائی۔ اس سے پہلے 2012 میں ہی روہت نے پہلی دو گیندوں پر ہی اپنا وکٹ گنوا دیا تھا۔ یعنی پاکستان کے خلاف صرف پہلی 2 گیندیں روہت شرما پر بھاری ہیں ۔

       

      یہ بھی پڑھئے:  محمد رضوان نے ہندوستان کے خلاف میچ میں جیت کا بتایا فارمولہ، کہی یہ بڑی بات


      وہیں وراٹ کوہلی کا پاکستان کے خلاف ٹی ٹوینٹی میں ریکارڈ شاندار ہے۔ انہوں نے 8 میچوں میں 70 کی اوسط سے 346 رنز بنائے ہیں۔ وہ پاکستان کے خلاف 3 نصف سنچریاں بھی بنا چکے ہیں۔ وہ ان 8 اننگز میں 3 بار ناٹ آؤٹ لوٹے ہیں۔ پاکستان کے خلاف کوہلی کی اوسط ان کے کیریئر کی اوسط (50.77) سے کافی بہتر ہے۔ انہوں نے گزشتہ میچ میں 35 رنز بنائے تھے، جبکہ کوہلی نے گزشتہ سال ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ میں 57 رنز بنائے تھے ۔

      ایسے میں اگر ہندوستان کو ایشیا کپ میں پاکستان کے خلاف اپنی جیت کا سلسلہ برقرار رکھنا ہے، تو اس کے لئے روہت شرما کے بلے سے رنز نکلنا ضروری ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: