ہوم » نیوز » اسپورٹس

ٹیم انڈیا کے تیز گیند باز محمد سمیع کی اہلیہ خود لڑیں گی اپنا کیس ، پولیس پر لگائے سنگین الزامات

حسین جہاں نے الزام لگایا ہے کہ کوئی بھی وکیل محمد سمیع کے دباؤ میں اس کا مقدمہ لینے کیلئے تیار نہیں ہے ، ایسے میں وہ خود ہی اپنا مقدمہ لڑیں گی ۔

  • Share this:
ٹیم انڈیا کے تیز گیند باز محمد سمیع کی اہلیہ خود لڑیں گی اپنا کیس ، پولیس پر لگائے سنگین الزامات
تیز گیند باز محمد سمیع کی اہلیہ خود لڑیں گی اپنا کیس ، پولیس پر لگائے سنگین الزامات

ہندوستانی کرکٹ ٹیم کے تیز گیند باز محمد سمیع کی اہلیہ حسین جہاں ایک مرتبہ پھر سرخیوں میں ہیں ۔ حسین جہاں نے الزام لگایا ہے کہ کوئی بھی وکیل محمد سمیع کے دباؤ میں اس کا مقدمہ لینے کیلئے تیار نہیں ہے ، ایسے میں وہ خود ہی اپنا مقدمہ لڑیں گی ۔ حسین جہاں نے پولیس پر اپنے اور اپنی بیٹی کے ساتھ نازیبا سلوک کا الزام عائد کیا ہے ، جس کی سماعت الہ آباد ہائی کورٹ میں ہوگی ۔


حسین جہاں نے پولیس پر نازیبا سلوک کا الزام عائد کرتے ہوئے الہ آباد ہائی کورٹ میں عرضی دائر کی ہے ۔ حسین جہاں نے الزام لگایا ہے کہ کوئی بھی وکیل میرا کیس لینے کے لئے تیار نہیں ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ جب اس نے اس کیس کے سلسلے میں وکلا سے بات کی ، تو ایک نے صحت سے متعلق پریشانی کا بہانہ بناکر کیس چھوڑ دیا اور دوسرے نے ذاتی وجوہات کی بنا پر اس کیس کو لینے سے انکار کردیا ۔ حسین جہاں نے الزام لگایا کہ وکلا محمد سمیع کے دباؤ میں ایسا کر رہے ہیں ۔


خیال رہے کہ حسین جہاں نے اپنی عرضی میں کہا تھا کہ وہ 28 اپریل 2019 کو امروہہ میں اپنے سسرال آئی تھیں ۔ اس وقت ان کی بیٹی اور ایک میڈ ان کے ساتھ تھی ۔ حسین جہاں نے الزام لگایا کہ پولیس شام ساڑھے آٹھ بجے اس کے گھر آئی اور بات کرکے واپس چلی گئی ۔ اس کے بعد ایک بار پھر 12 بجے پولیس آئی ، گھر میں داخل ہوگئی اور گالی گلوچ کرنے لگی ۔ بعد ازاں جس حالت میں وہ تھیں ، اسی حالت میں ان کو اٹھایا اور پولیس اسٹیشن لے گئی ۔


حسین جہاں
حسین جہاں


حسین جہاں نے بتایا کہ اس کو رات بھر تھانے میں بیٹھا کر رکھا گیا اور اگلے دن نو بجے گرفتار کرلیا گیا ۔ غور طلب ہے کہ حسین جہاں نے دو سال قبل محمد سمیع اور اس کے اہل خانہ کے خلاف جہیز کی خاطر ہراسانی اور نازیبا سلوک کا الزام عائد کیا تھا ۔ اس سلسلہ میں کولکاتہ میں ایک مقدمہ بھی درج کرایا گیا تھا ۔
First published: Feb 13, 2020 09:16 PM IST