ہوم » نیوز » اسپورٹس

ڈھائی دن میں شرمناک شکست سے بوکھلائے وراٹ کوہلی ، پریس کانفرنس میں سوال پوچھے جانے پر بھڑکے ، کہی یہ بات

ہندستان میچ کے تیسرے ہی دن سات وکٹوں سے شکست سے دو چار ہو گیا اور میچ کے بعد پریس کانفرنس میں وراٹ ایک صحافی کے سوال پر بھڑک گئے ۔

  • UNI
  • Last Updated: Mar 02, 2020 07:31 PM IST
  • Share this:
ڈھائی دن میں شرمناک شکست سے بوکھلائے وراٹ کوہلی ، پریس کانفرنس میں سوال پوچھے جانے پر بھڑکے ، کہی یہ بات
وراٹ کوہلی ۔ فائل فوٹو ۔

ہندوستانی ٹیم کی نیوزی لینڈ کے ہاتھوں ٹیسٹ سیریز میں 0-2 کی شرمناک شکست سے مایوس کپتان وراٹ کوہلی ایک صحافی کے سوال پر اپنا تحمل کھو بیٹھے اور بھڑک گئے۔ ہندستان میچ کے تیسرے ہی دن سات وکٹوں سے شکست سے دو چار ہو گیا اور میچ کے بعد پریس کانفرنس میں وراٹ ایک صحافی کے سوال پر بھڑک گئے ۔ میچ کے دوران دوسرے دن کے کھیل میں نیوزی لینڈ کے کپتان کین ولیمسن کا وکٹ گرنے کے بعد حوصلہ افزا وراٹ کچھ برا بھلا کہتے پائے گئے تھے اور انہوں نے ساتھ ہی اپنے ہونٹوں پر انگلی رکھ اسٹیڈیم میں موجود شائقین کو خاموش ہونے کا اشارہ کیا تھا ۔ یہ واقعہ کیمرے میں قید ہوا تھا اور اس کا ویڈیو سوشل میڈیا پر کافی وائرل ہوا تھا۔


میچ کے بعد پریس کانفرنس چل رہی تھی اور وراٹ سیریز میں اپنی ٹیم کے شکست کے اسباب کو گنا رہے تھے ۔ وراٹ نے قبول کر لیا تھا کہ ٹیم کافی خراب کھیلی اور اس ہار کو قبول کرنے میں انہیں کوئی شرم نہیں ہے ۔ لیکن تبھی ایک صحافی نے ان سے ولیمسن والا واقعہ کے تناظر میں پوچھ لیا اور ساتھ ہی کہا کہ ہندوستانی کپتان ہونے کے ناطے کیا انہیں ایک بہتر مثال پیش کرنے کی ضرورت نہیں ہے ۔ یہ پوچھنا تھا کہ وراٹ بھڑک ہی پڑے ۔ انہوں نے صحافی سے پوچھا کہ آپ کو لگتا ہے ۔ صحافی نے پھر سوال کیا کہ میں نے یہ سوال آپ سے پوچھا ہے۔ وراٹ نے پھر کہا کہ میں آپ سے جواب پوچھ رہا ہوں۔ اس پر صحافی نے کہا کہ آپ کو بہتر مثال پیش کرنے کی ضرورت ہے۔


ہندوستانی کپتان اپنا ضبط تقریبا کھو چکے تھے۔ انہوں نے اکھڑے انداز میں کہا کہ آپ کو یہ اچھی طرح معلوم ہونا چاہیے کہ اس وقت کیا ہوا تھا اور اس کے بعد ہی آپ کو بہتر سوالات کے ساتھ آنا چاہئے ۔ آپ آدھے ادھورے سوالات اور آدھی معلومات کے ساتھ آئے ہیں ۔ اگر آپ کوئی تنازعہ پیدا کرنا چاہتے ہیں تو یہ اس کے لئے صحیح جگہ نہیں ہے ۔ میں نے میچ ریفری سے بات کر لی ہے اور انہیں اس واقعہ کو لے کر کوئی پریشانی نہیں ہے ، شکریہ ۔

First published: Mar 02, 2020 07:31 PM IST