ہوم » نیوز » اسپورٹس

بنگلہ دیش کی کرکٹ ٹیم اور بورڈ کے درمیان صلح کروائے گا یہ بڑا کھلاڑی ، جانیں کیوں ہیں اختلافات

بنگلہ دیش کی وزیر اعظم شیخ حسینہ نے ون ڈے کپتان مشرف مرتضی کو کرکٹ بورڈ اور سینئر کھلاڑیوں کے درمیان جاری تنازع کو حل کرنے کیلئے ثالث مقرر کیا ہے ۔

  • Share this:
بنگلہ دیش کی کرکٹ ٹیم اور بورڈ کے درمیان صلح کروائے گا یہ بڑا کھلاڑی ، جانیں کیوں ہیں اختلافات
بنگلہ دیش کے ٹیم اور بورڈ کے درمیان صلح کروائے گا یہ بڑا کھلاڑی ، جانیں کیوں ہیں اختلافات

بنگلہ دیش کی وزیر اعظم شیخ حسینہ نے ون ڈے کپتان مشرف مرتضی کو  کرکٹ بورڈ اور سینئر کھلاڑیوں کے درمیان جاری تنازع کو حل کرنے کیلئے ثالث مقرر کیا ہے ۔ ای ایس پی این کرک انفو کی رپورٹ کے مطابق کھلاڑی بدھ کی شام کو بی سی بی افسران سے ملاقات کریں گے ۔


بی سی بی سی ای او نظام الدین چودھری نے کہا کہ کل شام کی میڈیا کانفرنس کے بعد میں نے ایک سینئر کھلاڑی سے بات کی ، جس نے مجھے بتایا کہ آپس میں بات کرکے وہ مجھ سے رابطہ کریں گے ، ہمیں شام پانج بجے ملاقات کی امید ہے ۔ مقامی میڈیا نے بی سی بی ڈائریکٹر محبوب الانعم  کے حوالے سے بتایا ہے کہ شیخ حسینہ نے مشرف مرتضی سے اس سلسلہ میں بات چیت کی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ وہ کرکٹ کے حالات کے بارے میں تازہ جانکاری چاہتی تھیں ۔ انہوں نے مشرف مرتضی سے کہا کہ وہ کھلاڑیوں کو پھر سے میدان پر لے کر آئیں۔


خیال رہے کہ شکیب الحسن اور محمود اللہ جیسے بنگلہ دیش کے سینئر کھلاڑیوں نے ہڑتال کا اعلان کیا ہے ۔ یہ سبھی کھلاڑی ملک میں کرکٹ کی صورتحال میں اصلاح کا مطالبہ کررہے ہیں ۔ کھلاڑیوں نے کرکٹ کا بائیکاٹ کردیا ہے ۔ شکیب الحسن نے کہا کہ جب تک ان کے مطالبات تسلیم نہیں کئے جاتے ہیں ، اس وقت تک وہ کرکٹ نہیں کھیلیں گے ۔ انہوں نے پیر کو اعلان کیا تھا تھا کہ جب تک تنخواہ سمیت دیگر مطالبات تسلیم نہیں کئے جاتے ہیں ، اس وقت تک وہ کرکٹ نہیں کھیلیں گے ۔ بائیکاٹ کی وجہ سے بنگلہ دیش کی نیشنل کرکٹ لیگ پر بھی اثر پڑے گا ۔ یہ لیگ فی الحال جاری ہے ۔


بنگلہ دیش کے کھلاڑیوں نے بورڈ کے سامنے 11 مطالبات پیش کئے ہیں ، جس میں بنگلہ دیش پریمیئر لیگ کے فرنچائزی ماڈل کو رد کرنے کا فیصلہ واپس لینے کا بھی مطالبہ شامل ہے ۔ پریس کانفرنس میں شکیب الحسن اور محمود اللہ شامل تھے ۔ بورڈ کے حالیہ کچھ دیگر فیصلوں کے بعد کھلاڑیوں میں کافی ناراضگی پائی جارہی ہے ۔
First published: Oct 23, 2019 09:43 PM IST