உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    2005 میں فیصل آباد بچ سے چھیڑ چھاڑ پر شاہد آفریدی کا بڑا انکشاف، بتایا شعیب ملک بھی یہ جانتے تھے

    اس واقعے کا ذکر کرتے ہوئے آفریدی نے مزید کہا، 'شعیب ملک نے جواب دیا، 'کر دے. کوئی نہیں دیکھ رہا ہے' (کرو، کوئی نہیں دیکھ رہا ہے)۔ تو میں نے پھر وہ کیا۔ اور پھر جو ہوا وہ تاریخ ہے۔

    اس واقعے کا ذکر کرتے ہوئے آفریدی نے مزید کہا، 'شعیب ملک نے جواب دیا، 'کر دے. کوئی نہیں دیکھ رہا ہے' (کرو، کوئی نہیں دیکھ رہا ہے)۔ تو میں نے پھر وہ کیا۔ اور پھر جو ہوا وہ تاریخ ہے۔

    اس واقعے کا ذکر کرتے ہوئے آفریدی نے مزید کہا، 'شعیب ملک نے جواب دیا، 'کر دے. کوئی نہیں دیکھ رہا ہے' (کرو، کوئی نہیں دیکھ رہا ہے)۔ تو میں نے پھر وہ کیا۔ اور پھر جو ہوا وہ تاریخ ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • inter, IndiaPakistanPakistanPakistanPakistan
    • Share this:
      پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کھلاڑی شاہد آفریدی نے اعتراف کیا ہے کہ انہوں نے 2005 میں انگلینڈ کے خلاف ٹیسٹ میچ کے دوران فیصل آباد کی پچ کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کی تھی۔ شاہد آفریدی جو اپنی بڑی ہٹنگ کے ساتھ ساتھ اپنی اسپن باؤلنگ کے لیے بھی جانے جاتے تھے، نے کہا کہ وہ پچ سے مایوس تھے جس کی وجہ سے انھوں نے اس کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کرنے کا ایکشن لیا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ پاکستان کے سابق کپتان شعیب ملک کو ان کے پلان کے بارے میں معلوم تھا اور انہوں نے ان کی حوصلہ افزائی بھی کی تھی۔

      شاہد آفریدی نے سماء ٹی وی کے ایک شو میں کہا کہ ٹیسٹ میچ فیصل آباد میں تھا۔ گیند نہ اسپن ہورہی تھی، نہ سوئنگ اور نہ ہی سیمنگ۔ میں اپنی پوری کوشش کر رہا تھا، لیکن کچھ نہیں ہو رہا تھا۔ اس کے بعد اچانک ایک گیس سلنڈر پھٹ گیا اور سب کی توجہ ہٹ گئی۔ میں نے ملک (شعیب ملک) سے کہا، 'میرا دل چاہتا ہے کہ میں یہاں ایک پیچ بنادوں۔ تاکہ گیند ٹرن ہو!

      جب بھی ٹوائلیٹ جاتا ہوں، کوئی پیچھا کرتا ہے، اس کرکٹر نے بتایا پاکستان میں سکیورٹی کا حال
      اس واقعے کا ذکر کرتے ہوئے آفریدی نے مزید کہا، 'شعیب ملک نے جواب دیا، 'کر دے. کوئی نہیں دیکھ رہا ہے' (کرو، کوئی نہیں دیکھ رہا ہے)۔ تو میں نے پھر وہ کیا۔ اور پھر جو ہوا وہ تاریخ ہے۔ وہ واقعہ… جب میں اس وقت پیچھے مڑ کر دیکھتا ہوں تو مجھے احساس ہوتا ہے کہ یہ ایک غلطی تھی۔


      فلائٹ میں نماز پر ہنگامہ، کھڑکی پر جڑے لات گھونسے، زبردستی سیٹ پر باندھا، پھر ہوا یہ۔۔۔

      آفریدی نے جس ٹیسٹ میچ کا حوالہ دیا وہ 2005 میں پاکستان اور انگلینڈ کے درمیان تین میچوں کی ٹیسٹ سیریز کا دوسرا میچ تھا۔ پاکستان نے ملتان میں پہلا ٹیسٹ میچ 22 رنز سے جیتا تھا جبکہ فیصل آباد میں دوسرا میچ ڈرا پر ختم ہوا تھا۔ میزبان ٹیم نے لاہور میں تیسرا ٹیسٹ اننگز اور 100 رنز سے جیت کر سیریز 2-0 سے اپنے نام کر لی۔ ون ڈے کرکٹ میں تیز ترین سنچری کا ریکارڈ آفریدی کے نام درج ہے۔ وہ کرکٹ کے میدان میں ایک آل راؤنڈر کے طور پر جانے جاتے ہیں۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: