உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    شعیب اختر ہوئے موجودہ دور کی کرکٹ سے مایوس، ICC کو دئے یہ بڑے مشورے

     شعیب اختر (Shoaib Akhtar)  کی مانگ ہے کہ ٹیسٹ کرکٹ میں دوبارہ باڈی لائن گیند بازی کو شروع کی جائے ۔ ساتھ ہی ایک اوور میں باونسر پھینکنے کی جو وقت طے کی گئی ہے ، اس کو بھی ختم کردیا جانا چاہئے ۔ اس سے کرکٹ میں دلچسپی پیدا ہوگی اور دلچسپ مقابلے دیکھنے کو ملیں گے ۔

    شعیب اختر (Shoaib Akhtar) کی مانگ ہے کہ ٹیسٹ کرکٹ میں دوبارہ باڈی لائن گیند بازی کو شروع کی جائے ۔ ساتھ ہی ایک اوور میں باونسر پھینکنے کی جو وقت طے کی گئی ہے ، اس کو بھی ختم کردیا جانا چاہئے ۔ اس سے کرکٹ میں دلچسپی پیدا ہوگی اور دلچسپ مقابلے دیکھنے کو ملیں گے ۔

    شعیب اختر (Shoaib Akhtar) کی مانگ ہے کہ ٹیسٹ کرکٹ میں دوبارہ باڈی لائن گیند بازی کو شروع کی جائے ۔ ساتھ ہی ایک اوور میں باونسر پھینکنے کی جو وقت طے کی گئی ہے ، اس کو بھی ختم کردیا جانا چاہئے ۔ اس سے کرکٹ میں دلچسپی پیدا ہوگی اور دلچسپ مقابلے دیکھنے کو ملیں گے ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : کرکٹ میں جب بھی تیز گیندبازی کی بات ہوتی ہے ، تو پاکستان کے شعیب اختر (Shoaib Akhtar)  کا نام ضرور لیا جاتا ہے ۔ اختر اپنی تیز رفتار گیندبازی کیلئے جانے جاتے تھے ۔ اس سابق تیز گیند باز نے کئی مرتبہ یہ بات کہی ہے کہ موجودہ دور میں پہلے جیسی تیز گیندبازی نہیں ہوتی ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ انہوں نے بین الاقوامی کرکٹ کونسل سے اب موجودہ قوانین کی مانگ کی ہے ۔ شعیب اختر (Shoaib Akhtar)  کی مانگ ہے کہ ٹیسٹ کرکٹ میں دوبارہ باڈی لائن گیند بازی کو شروع کی جائے ۔ ساتھ ہی ایک اوور میں باونسر پھینکنے کی جو وقت طے کی گئی ہے ، اس کو بھی ختم کردیا جانا چاہئے ۔ اس سے کرکٹ میں دلچسپی پیدا ہوگی اور دلچسپ مقابلے دیکھنے کو ملیں گے ۔

       

      یہ بھی پڑھئے : IPL 2022 سے پہلے گلین میکسویل نے ہندوستانی گرل فرینڈ سے کی شادی، دیکھئے پہلی تصویر


      انگلینڈ نے 1932-33 کی ایشیز سیریز سے باڈی لائن گیند بازی شروع کی تھی ۔ اس میں گیند باز گیند کو بلے باز کی جسم کی طرف پھینکتا تھا، جس سے وہ گیند کھیلنے پر مجبور ہوتا یا گیند اس کے جسم پر لگتی ۔ حالانکہ ، کھلاڑیوں کے لگاتار زخمی ہونے کی وجہ سے اس قانون کو جلد ہی ہٹادیا گیا ۔ وہیں ٹیسٹ میں ایک اوور میں زیادہ سے زیادہ دو باونسر پھینکنے کا قانون 1994سے وجود میں آیا تھا ۔

      پاکستان کے سابق تیز گیند باز شعیب اختر نے زور دے کر کہا کہ مارڈن ڈے کرکٹر سافٹ بن گئے ہیں اور ان میں کوئی جارحیت نہیں بچی ہے ۔ انہوں نے کرکٹ میں کیریکٹر اور دلچسپی لانے کیلئے پرانے قوانین کو واپس لانے کا بھی مطالبہ کیا ۔

       

      یہ بھی پڑھئے : بابر اعظم نے بنایا سب سے بڑا ورلڈ ریکارڈ، پیچھے رہ گئے وراٹ کوہلی


      انگریزی اخبار ڈیلی میل نے اختر کے حوالے سے لکھا : موجودہ دور میں کرکٹ کھلاڑی کافی سفاٹ ہیں ، مجھے لگتا کہ ان میں زیادہ جارحیت ہے ، مجھے نہیں معلوم ایسا کیوں ہے ؟ میں اولڈ اسکول سوچ والا کھلاڑی رہا ہوں ، جیسا کہ ایان چیپل ہیں ۔

      رپورٹ میں شعیب اختر کے حوالے سے مزید کہا گیا ہے کہ وہ چاہتے ہیں کہ گیند باز لامحدود باونسر پھینک سکیں ۔ ٹیسٹ کرکٹ میں باڈی لائن کو منظوری ملنی چاہئے ۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ کھیل میں کریکٹر دیکھنا چاہتے ہیں۔

       
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: