உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    IPL یا پاکستان سپر لیگ؟ اب کھلاڑیوں کے سامنے کسی ایک کو منتخب کرنے کا سوال

    IPL یا پاکستان سپر لیگ؟ اب کھلاڑیوں کے سامنے کسی ایک کو منتخب کرنے کا سوال (BCCI Twitter)

    IPL یا پاکستان سپر لیگ؟ اب کھلاڑیوں کے سامنے کسی ایک کو منتخب کرنے کا سوال (BCCI Twitter)

    PSL vs IPL : پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) کی چیمپئنز ٹرافی کے انعقاد کے علاوہ کرکٹ کے مصروف شیڈول کے باعث 2025 میں پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) اور انڈین پریمیئر لیگ (آئی پی ایل) کی تاریخوں میں ٹکراؤ کا قوی امکان ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی : پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) کی چیمپئنز ٹرافی کے انعقاد کے علاوہ کرکٹ کے مصروف شیڈول کے باعث 2025 میں پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) اور انڈین پریمیئر لیگ (آئی پی ایل) کی تاریخوں میں ٹکراؤ کا قوی امکان ہے۔ آئی پی ایل کی ڈھائی ماہ کی ونڈو (ٹورنامنٹ کے انعقاد کا وقت) مارچ سے شروع ہوکر جون کی شروعات تک چلتی ہے۔ پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کو حالانکہ اپنی ٹی ٹوینٹی لیگ کے دسویں سیشن کو جنوری ۔ فروری کے ریگولر وقت کے بعد مارچ اور مئی کے درمیان منعقد کرنے پر مجبور ہونا پڑ رہا ہے۔ کیونکہ اس سے پہلے پاکستان کو فروری 2025 میں چیمپئنز ٹرافی کی میزبانی کرنی ہے۔

       

      یہ بھی پڑھئے : T20 WC ایشیا میں لوٹے گا واپس، ہندوستان ۔ سری لنکا 2026 میں مل کر کریں گے میزبانی


      یہ پہلی مرتبہ ہوگا جب آئی پی ایل کے دوران کسی ٹی 20 لیگ کا انعقاد ہوگا۔ اب یہ دیکھنا دلچسپ ہوگا کہ دونوں لیگز میں کھیلنے والے کرکٹرز کس لیگ کا انتخاب کرتے ہیں۔ چیمپئنز ٹرافی 2025 تقریباً 30 سالوں میں پاکستان میں منعقد ہونے والا پہلا آئی سی سی ٹورنامنٹ ہوگا ۔

       

      یہ بھی پڑھئے: رکی پونٹنگ نے کی سوریہ کمار یادو کی تعریف تو بھڑک گئے سابق پاکستانی کپتان


      ہندوستان اگلے سائیکل میں کئی آئی سی سی ایونٹس کی میزبانی کرے گا۔ 2023 میں  50 اوور کا ورلڈ کپ دوسری مرتبہ پوری طرح سے ہندوستان میں کھیلا جائے گا۔ ہندوستان 2025 میں خواتین کے 50 اوور کے ورلڈ کپ کی میزبانی بھی کرے گا۔ وہیں 2029 میں ہندوستان چیمپئنز ٹرافی کی میزبانی کرے گا ۔

      ہندوستانی مردوں کی ٹیم اگلے پانچ سالوں میں یعنی مئی 2023 سے اپریل 2027 تک 141 الاقوامی میچ کھیلے گی۔ ہندوستانی ٹیم پانچ سالوں میں 38 ٹیسٹ، 42 ون ڈے اور 61 ٹی ٹوینٹی میچ کھیلے گی۔ اس میں پاکستان کے خلاف کوئی دو طرفہ سیریز نہیں کھیلی جائے گی۔ اس دوران 12 رکن ممالک 777 انٹرنیشنل میچز کھیلیں گے، جن میں 173 ٹیسٹ، 281 ون ڈے اور 323 ٹی ٹوینٹی میچز شامل ہیں، موجودہ سیزن میں ٹیموں نے 694 میچز کھیلے ہیں ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: