உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    چنئی سپرکنگس کو بڑا جھٹکا، رویندر جڈیجہ چوٹ کے سبب IPL 2022 سے باہر

    چنئی سپرکنگس کو بڑا جھٹکا، رویندر جڈیجہ چوٹ کے سبب IPL 2022 سے باہر

    چنئی سپرکنگس کو بڑا جھٹکا، رویندر جڈیجہ چوٹ کے سبب IPL 2022 سے باہر

    Ravindra Jadeja Ruled out of IPL 2022: تجربہ کار آل راونڈر رویندر جڈیجہ پسلی میں چوٹ کے سبب آئی پی ایل ٹورنا منٹ سے باہر ہوگئے ہیں۔ رویندر جڈیجہ نے اس سیزن میں آئی پی ایل کے کچھ میچوں میں چنئی سپرکنگس کی کپتانی کی تھی، جس میں ان کی کارکردگی کچھ خاص نہیں رہی تھی۔ جڈیجہ ٹیم کو فرنٹ سے لیڈ کرنے میں ناکام رہے تھے۔

    • Share this:
      نئی دہلی: چنئی سپرکنگس کو ممبئی انڈینس کے خلاف مقابلے سے پہلے زبردست جھٹکا لگا ہے۔ چنئی سپرکنگس کے تجربہ کار آل راونڈر رویندر جڈیجہ (Ravindra Jadeja out of IPL 2022) چوٹ کی وجہ سے آئی پی ایل 2022 سے باہر ہوگئے ہیں۔ چنئی سپرکنگس کو اس کے 12ویں مقابلے میں ممبئی انڈینس سے 12 مئی کو مدمقابل ہونا ہے۔ آئی پی ایل کے اس سیزن میں رویندر جڈیجہ بلے بازی، گیند بازی اور فیلڈنگ میں بری طرح فلاپ رہے ہیں۔

      پی ٹی آئی کے مطابق، رویندر جڈیجہ کے باہر ہونے کی تصدیق چنئی سپرکنگس کے سی ای او کاشی وشوناتھ نے کی ہے۔ آئی پی ایل کے 15ویں سیزن کے شروع ہونے پہلے رویندر جڈیجہ کو چنئی سپرکنگس کا کپتان اعلان کیا گیا تھا۔ رویندر جڈیجہ کی کپتانی میں چنئی سپرکنگس کو مسلسل کئی مقابلوں میں شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ حالانکہ بعد میں رویندر جڈیجہ نے مہندر سنگھ دھونی کو کپتانی سونپ دی تھی۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      راشد خان نے T20کرکٹ میں پورے کئے سب سے تیز 450 وکٹ، خطرے میں عمران طاہر کا بڑا ریکارڈ

      جڈیجہ دہلی کیپٹلس کے خلاف مقابلہ نہیں کھیلے تھے

      رویندر جڈیجہ دہلی کپٹلس کے خلاف گزشتہ مقابلہ نہیں کھیلے تھے۔ رپورٹس کے مطابق، رائل چیلنجرس بنگلورو کے خلاف میچ میں کیچ لپکنے کے دوران ان کے ہاتھ میں چوٹ لگ گئی تھی۔ اس سے پہلے، چنئی سپرکنگس کی خراب کارکردگی کے سبب رویندر جڈیجہ کو بیچ میں ہی کپتانی چھوڑنی پڑی تھی۔ ان کی جگہ مہندر سنگھ دھونی کو ٹیم کا کپتان بنایا گیا تھا۔ ان کے کپتان بننے کے بعد ٹیم نے دہلی کیپٹلس کو شکست دی تھی۔

      چنئی سپرکنگس کو اس آئی پی ایل میں تین اور میچ کھیلنے ہیں

      چنئی سپرکنگس کو اب آئی پی ایل 2022 میں تین اور مقابلے کھیلنے ہیں۔ پلے آف کی امیدیں بنائے رکھنے کے لئے اسے ان تینوں مقابلوں میں کسی بھی صورت میں جیت درج کرنی ہوگی۔ اس کے بعد اسے دیگر ٹیموں کے نتائج پر بھی منحصر رہنا ہوگا۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: