ہوم » نیوز » اسپورٹس

IPL 2020: عرفان پٹھان کا بڑا بیان- اگر انڈین کوچ ہوتا تو نہیں جاتی دنیش کارتک کی کپتانی

عرفان پٹھان نے دنیش کارتک کےکپتانی چھوڑنے کے معاملے میں غیر ملکی کوچ کا مسئلہ اٹھایا ہے۔ انہوں نےکہا کہ کے کے آر کےکوچ برینڈن میک کولم ہیں، جو غیرملکی ہیں۔ ہوسکتا ہے کہ ان کی ایان مورگن سے اچھی سمجھ ہو۔ اسی وجہ سے ایان مورگن کو کپتانی ملی ہو۔

  • Share this:
IPL 2020: عرفان پٹھان کا بڑا بیان- اگر انڈین کوچ ہوتا تو نہیں جاتی دنیش کارتک کی کپتانی
IPL 2020: عرفان پٹھان کا بڑا بیان- اگر انڈین کوچ ہوتا تو نہیں جاتی دنیش کارتک کی کپتانی

آئی پی ایل 2020 میں کولکاتا نائٹ رائیڈرس (کے کے آر) کو سات میں سے چار میچ جتانے والے کپتان دنیش کارتک نے جمعہ کو اپنی ٹیم کی کپتانی چھوڑ دی ہے۔ ان کی جگہ اب انگلینڈ کے ایان مورگن (Eoin Morgan) ٹیم کی ذمہ داری سنبھالیں گے۔ دنیش کارتک (Dinesh Karthik) کی طرف سے کہا گیا ہے کہ انہوں نے اپنی بیٹنگ پر فوکس کرنے کے لئے کپتانی چھوڑی ہے۔ تاہم کرکٹ شائقین سے لے کر ماہرین تک کو یہ بات ہضم نہیں ہو رہی ہے۔ سابق آل راونڈر عرفان پٹھان (Irfan Pathan) بھی دنیش کارتک کے کپتانی چھوڑنے کے سوال پر اٹھائے ہیں۔


کولکاتا نائٹ رائیڈرس (Kolkata Knight Riders) کو جمعہ کو ہی ممبئی انڈینس سے میچ کھیلنا ہے۔ اس میچ سے پہلے اسٹار اسپورٹس کے پروگرام میں دنیش کارتک کی کپتانی پر سرخیوں ہوتی رہی۔ کیا ٹورنامنٹ کے درمیان میں کپتانی چھوڑنے سے ٹیم پر اثر پڑتا ہے؟ اس سوال کے جواب میں عرفان پٹھان نے کہا کہ یقیناً کھلاڑی پر بہت آجاتا ہے۔ برا حال ہوجاتا ہے۔ کھلاڑی کو سمجھ نہیں آتا کہ کدھر جانا ہے۔


 عرفان پٹھان نے دنیش کارتک کے کپتانی چھوڑنے کے معاملے میں غیر ملکی کوچ کا مسئلہ بھی اٹھایا۔ انہوں نے کہا کہ کولکاتا نائٹ رائیڈرس کے کوچ برینڈن میک کولم ہیں، جو غیر ملکی ہیں۔

عرفان پٹھان نے دنیش کارتک کے کپتانی چھوڑنے کے معاملے میں غیر ملکی کوچ کا مسئلہ بھی اٹھایا۔ انہوں نے کہا کہ کولکاتا نائٹ رائیڈرس کے کوچ برینڈن میک کولم ہیں، جو غیر ملکی ہیں۔


عرفان پٹھان نے دنیش کارتک کے کپتانی چھوڑنے کے معاملے میں غیر ملکی کوچ کا مسئلہ بھی اٹھایا۔ انہوں نے کہا کہ کولکاتا نائٹ رائیڈرس کے کوچ برینڈن میک کولم ہیں، جو غیر ملکی ہیں۔ ہوسکتا ہے کہ ان کی ایان مورگن سے اچھی سمجھ ہو۔ اسی وجہ سے ایان مورگن کو کپتانی ملی ہو۔ ایک سوال اٹھتا ہے کہ کیا ٹیم میں انڈین کوچ ہوتا تو یہ فیصلہ ہوتا۔ شاید نہیں، اگر ہندوستانی کوچ ہوتا تو شاید یہ فیصلہ نہیں ہوتا۔

دنیش کارتک نے محض 6 دن پہلے ہی کنگس الیون پنجاب کے خلاف شاندار نصف سنچری بنائی تھی۔ عرفان پٹھان نے اس کا بھی ذکر کیا۔ انہوں نے کہا کہ کولکاتا نائٹ رائیڈس کے 7 میچ سے 8 پوائنٹ ہیں۔ یہ بری صورتحال نہیں ہے۔ اگر ٹیم پلے آف کے لئے کوالیفائی کرتی تو سب سے زیادہ سہرا دنیش کارتک کو ہی ملتا۔ دھیان رکھئے کہ دنیش کارتک ایک میچ پہلے ہی مین آف دی میچ بنے تھے۔ آئی پی ایل کے موجودہ سیزن میں دنیش کارتک کی کارکردگی اوسط رہی ہے۔ انہوں نے 7 اننگ میں 108 رن بنائے ہیں۔ اس میں ایک نصف سنچری شامل ہے۔ آئی پی ایل 2020 میں کولکاتا نائٹ رائیڈرس کو اب تک 7 میں سے 4 میچوں میں جیت ملی ہے۔ فی الحال 8 پوائنٹ کے ساتھ یہ ٹیم پوائنٹ ٹیبل میں چوتھے نمبر پر ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Oct 16, 2020 08:13 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading