ہوم » نیوز » اسپورٹس

اٹل بہاری واجپئی نے اس طرح کی تھی پاکستان کرکٹ بورڈ کی امداد

سنہ 2004 میں جب اٹل بہاری واجپئی ہندوستان کے وزیر اعظم تھے تب انہوں نے پاکستان سے رشتہ بہتر بنانے کی بھرپور کوشش کی تھی۔

  • Share this:
اٹل بہاری واجپئی نے اس طرح کی تھی پاکستان کرکٹ بورڈ کی امداد
اٹل بہاری واجپئی: فائل فوٹو۔

سنہ 2004 میں جب اٹل بہاری واجپئی ہندوستان کے وزیر اعظم تھے تب انہوں نے پاکستان سے رشتہ بہتر بنانے کی بھرپور کوشش کی تھی۔ انہوں نے دلی سے لاہور تک دوستی بس سروس شروع کی، ریل خدمات کا آغاز کیا اور ہندوستانی کرکٹ ٹیم کو پاکستان بھیجا۔


یہ وہ دور تھا جب سیکورٹی وجوہات سے کوئی بھی ٹیم پاکستان کا دورہ کرنا نہیں چاہتی تھی۔ تمام اندرونی مخالفتوں کے باوجود بھی اٹل بہاری واجپئی نے ٹیم انڈیا کو پاکستان دورہ پر بھیجا۔ اس وقت کے کپتان سوربھ گنگولی کی قیادت میں ہندوستانی ٹیم وہاں گئی۔ اس ٹیم کا پاکستان میں زبردست خیرمقدم کیا گیا۔


گنگولی نے بھی ایک انٹرویو میں کہا تھا کہ پاکستان میں ٹیم کا زوردار خیرمقدم کیا گیا۔ یہاں تک کہ ریستوران والے بھی پیسے نہیں لیتے تھے۔ پاکستان کے عوام نے ٹیم کو سر آنکھوں پر بٹھایا۔ لیکن ان سب کوششوں کا سہرا اٹل بہاری واجپئی کے سرجاتا ہے۔ اس دوران دونوں ملکوں کے رشتوں میں بھی کافی بہتری آئی۔ ہندوستانی کرکٹ ٹیم نے تب پاکستان کے اس وقت کے صدر جنرل پرویز مشرف سے بھی ملاقات کی تھی۔ ٹیم انڈیا نے تب پاکستان کے خلاف پانچ ون ڈے انٹرنیشنل اور تین ٹیسٹ میچ کھیلے تھے۔ اس دوران ٹیم انڈیا نے یک روزہ سیریز 3-2 اور ٹیسٹ سیریز 2-1 سے جیتی تھی۔ اس وقت پاکستانی ٹیم کی قیادت انضمام الحق کر رہے تھے۔


ان سب کوششوں سے پاکستان کرکٹ بورڈ کو کافی فائدہ ہوا۔ اس وقت پی سی بی کی حالت کافی خراب تھی۔ اس سے بورڈ کی کافی کمائی بھی ہوئی۔ ہندوستانی ٹیم کے کامیاب پاک دورہ کے بعد کئی دیگر ملکوں کی ٹیمیں بھی پاکستان دورے کے لئے راضی ہوئیں۔ اس طرح پاکستان میں دورہ کو لے کر غیر ملکی ٹیموں میں جو خوف پایا جاتا تھا وہ دھیرے دھیرے ختم ہونے لگا۔

First published: Aug 16, 2018 03:41 PM IST