உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    گوتم گمبھیر کو جان سے مارنے کی دھمکی دینے والا میل Pakistani Student نے بھیجا، پولیس ذرائع کا دعویٰ

    Gautam Gambhir Threat Email: ۔ دہلی پولیس کے سائبر سیل کے حکام کا کہنا ہے کہ یہ دھمکی آمیز ای میلز انہیں پاکستان کے طلباء نے بھیجا تھا۔ بتادیں کہ گمبھیر کو دو میل بھیجے گئے تھے جس میں انہیں جان سے مارنے کی دھمکی دی گئی تھی۔

    Gautam Gambhir Threat Email: ۔ دہلی پولیس کے سائبر سیل کے حکام کا کہنا ہے کہ یہ دھمکی آمیز ای میلز انہیں پاکستان کے طلباء نے بھیجا تھا۔ بتادیں کہ گمبھیر کو دو میل بھیجے گئے تھے جس میں انہیں جان سے مارنے کی دھمکی دی گئی تھی۔

    Gautam Gambhir Threat Email: ۔ دہلی پولیس کے سائبر سیل کے حکام کا کہنا ہے کہ یہ دھمکی آمیز ای میلز انہیں پاکستان کے طلباء نے بھیجا تھا۔ بتادیں کہ گمبھیر کو دو میل بھیجے گئے تھے جس میں انہیں جان سے مارنے کی دھمکی دی گئی تھی۔

    • Share this:
      نئی دہلی: پولیس نے بھارتیہ جنتا پارٹی کے رکن پارلیمنٹ اور سابق کرکٹر گوتم گمبھیر (BJP MP Gautam Gambhir) کو جان سے مارنے کی دھمکی والی ای میل کا معاملہ حل کر لیا ہے۔ دہلی پولیس کے سائبر سیل کے حکام کا کہنا ہے کہ یہ دھمکی آمیز ای میل انہیں پاکستان (Pakistani Students) کے طلباء نے بھیجا تھا۔ بتادیں کہ گوتم گمبھیر کو دو میل بھیجے گئے تھے جس میں انہیں جان سے مارنے کی دھمکی دی گئی تھی۔ کہا گیا کہ انہیں یہ دونوں دھمکیاں آئی ایس آئی ایس کشمیر (ISIS Kashmir) سے ملی ہیں۔ اس دھمکی کے بعد گمبھیر کے گھر کے باہر سکیورٹی بڑھا دی گئی تھی۔
      CNN-News18 کو دہلی پولیس کے بڑے ذرائع سے اطلاع ملی ہے کہ گمبھیر کو دونوں ای میل کراچی، پاکستان سے کئے گئے تھے۔ یہ میل انہیں شاہد حامد نامی شخص نے کیا تھا۔ بتایا جا رہا ہے کہ اس نوجوان کی عمر 20 سے 25 سال کے درمیان ہے۔ اور وہ سندھ یونیورسٹی کا طالب علم ہے۔
      کیا کجھا تھا ای میل میں۔۔۔۔
      گوتم گمبھیر نے بدھ کو دوسرا دھمکی آمیز ای میل ملنے کے بعد دہلی پولیس کے پاس شکایت درج کرائی ہے ۔ گمبھیر کے مطابق انہیں دوسرا ای میل “isiskashmir@gmail.com” آئی ڈی سے ملا ہے ۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق اس ای میل میں لکھا ہے کہ ہم تمہیں مارنا چاہتے تھے ، لیکن تم کل بچ گئے ۔ اگر تم اپنی زندگی اور اپنے کنبہ سے پیار کرتے ہو تو سیاست اور کشمیر کے مسئلے سے دور رہو ۔ اتنا ہی نہیں اس ای میل میں گمبھیر کے گھر کے باہر کا ویڈیو بھی شوٹ کرکے بھیجا گیا ہے ۔

      افسران نے بتایا کہ ای میل میں لکھا ہے کہ ہم تمہیں اور تمہارے کنبہ کو جان سے مار دیں گے ۔ انہوں نے بتایا کہ شکایت میں معاملہ کا نوٹس لینے ، کیس درج کرنے اور سیکورٹی کے انتظامات کرنے کی اپیل کی گئی ہے ۔ پولیس اسپیشل سیل کی جانب سے گوگل کو خط لکھ کر اس ای میل آئی ڈی کے آپریٹر سمیت دیگر متعلقہ جانکاری مانگی گئی ہے ، جس سے دھمکی آمیز پیغام بھیجا گیا ہے ۔
      ای میل میں کیا لکھا تھا؟
      گمبھیر کو بھیجنے سے پہلے ای میل میں لکھا تھا، 'ہم آپ کو اور آپ کے خاندان کو موت کے گھاٹ اتار دیں گے۔ ایک اور ای میل میں گمبھیر کے گھر کے باہر ایک ویڈیو بھی بھیجا گیا تھا اور اس میں لکھا گیا تھا، 'ہم آپ کو مارنا چاہتے تھے، لیکن آپ کل بچ گئے۔ اگر آپ اپنی جان اور اپنے خاندان سے پیار کرتے ہیں تو سیاست اور مسئلہ کشمیر سے دور رہیں۔
      اسپیشل سیل کے ایک سینئر پولیس افسر نے بتایا کہ اس سے اس آلہ کے آئی پی ایڈریس کے بارے میں جانکاری مل پائے گی ، جس سے دھمکی آمیز ای میل بھیجا گیا ہے ۔
      دھمکی کا مقصد کیا تھا؟
      پولیس ذرائع نے بتایا کہ انہیں دھمکیوں کے پیچھے کوئی بڑا مقصد نہیں ملا۔ بھیجی گئی ویڈیو یوٹیوب سے تھی، ممکنہ طور پر گمبھیر کے ایک حامی نے نومبر 2020 میں اپ لوڈ کی تھی۔ ذرائع نے بتایا کہ معاملے کی تحقیقات جاری ہے اور مزید کارروائی کے لیے نتائج کو مرکزی انٹیلی جنس ٹیموں کے ساتھ شیئر کیا جائے گا۔

      گوتم گمبھیر نے درج کرائی شکایت
      اس سے پہلے بدھ کو ہی مشرقی دہلی سے بی جے پی ممبر اسمبلی نے آئی ایس آئی ایس کشمیر کی جانب سے دھکی آمیز ای میل ملنے کے بعد دہلی پولیس کا رخ کیا تھا ۔ دھمکی ملنے کے بعد ان کی دہلی میں واقع رہائش گاہ کے باہر سیکورٹی سخت کردی گئی ہے ۔ افسران نے بتایا کہ پولیس ڈپٹی کمشنر ( وسطی) کو بھیجی گئی ایک شکایت میں کہا گیا ہے کہ منگل کو رات تقریبا نو بج کر 32 منٹ پر گوتم گمبھیر کے آفیشیل ای میل آئی ڈی پر آئی ایس آئی ایس کشمیر کی طرف سے جان سے مارنے کی دھمکی ملی ۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: